Sunday , February 18 2018
Home / دنیا / روہنگیا مسلم پناہ گزینوں کی دو ماہ میں وطن واپسی

روہنگیا مسلم پناہ گزینوں کی دو ماہ میں وطن واپسی

بنگلہ دیش اور میانمارمیں معاہدہ، سوچی سے وزیرخارجہ بنگلہ دیش کے مذاکرات
یانگون ۔ 23 نومبر(سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیش اور میانمار روہنگیا پناہ گزینوں کی اندرون دو ماہ بازآبادکاری کا آغاز کردیں گے۔ بنگلہ دیش نے آج اس کا انکشاف کیا۔ عالمی دباؤ پناہ گزینوں کے بحران کی وجہ سے میانمار پر بڑھ گیا تھا۔ 5 لاکھ سے زیادہ افراد سرحدپار فرار ہوچکے تھے۔ تقریباً 6لاکھ 20 ہزار روہنگیا پناہ گزین بنگلہ دیش میں اگست سے اب تک داخل ہوگئے تھے۔ یہاں دنیا کا سب سے بڑا پناہ گزین کیمپ قائم کیا گیا تھا۔ میانمار کی فوج میں میانمار کی ریاست راکھین کے روہنگیا مسلمانوں کے خلاف کارروائی کی تھی جس کی وجہ سے مسلم پناہ گزین اپنی جان بچا کر پڑوسی ملک بنگلہ دیش فرار ہونے پر مجبور ہوگئے تھے۔ امریکہ نے واضح طور پر الزام عائد کیا تھا کہ یہ ’’نسلی صفایا‘‘ کے مترادف ہے۔ وزیرخارجہ ریکس ٹلرسن نے سخت ترین الفاظ میں میانمارکی فوج کی کارروائی کی مذمت کی تھی اور الزام عائد کیا تھاکہ وہ روہنگیا پناہ گزینوں پر ناقابل بیان مظالم ڈھا رہی ہے۔ میانمار کی منتخب قائد آنگ سان سوچی اور وزیرخارجہ بنگلہ دیش اے ایچ محمود علی کے درمیان بات چیت کے نتیجہ میں ایک معاہدہ طئے پایا اور دونوں ممالک نے اتفاق کیا کہ روہنگیا پناہ گزینوں کو میانمار واپسی کی اجازت دی جائے گی اور ان کی بازآباد کاری کے انتظامات کئے جائیں گے۔ کئی ہفتوں تک بازآباد کاری کے شرائط و قواعد پر سودے بازی کے بعد دونوں ممالک کے درمیان میانمار کے دارالحکومت نیپیٹا میں آج یہ معاہدہ طئے پایا۔ بنگلہ دیش نے مختصر بیا ن میں کہا کہ دونوں ممالک پناہ گزینوں کی دو ماہ کے اندر میانمار واپسی سے اتفاق کرچکے ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہیکہ ایک ورکنگ گروپ قائم کیا گیا ہے جو بازآباد کاری کے انتظامات کرے گا۔

TOPPOPULARRECENT