Saturday , December 15 2018

’’روہنگیا پناہ گزین ، برما کے شہری ہیں اور برما واپس چلے جائیں‘‘

مہاجرین کو شناختی دستاویزات جاری نہ کرنے کی ہدایت ، برما کیساتھ واپسی کا مسئلہ اُٹھایا جائے گا ، راجناتھ سنگھ کا خطاب

جموں۔ 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے کہا کہ ہندوستان میں مقیم روہنگیا پناہ گزین برما کے شہری ہیں اور انہیں برما واپس چلے جانا چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ وزارت داخلہ نے جموں وکشمیر سمیت تمام ریاستی حکومتوں کو ہدایت دی ہے کہ وہ اپنی ریاستوں میں مقیم روہنگیا پناہ گزینوں کی شناخت کرے اور وزارت داخلہ کو تفصیلات سے آگاہ کرے ۔ انہوں نے کہا کہ تفصیلات حاصل ہونے کے بعد روہنگیا پناہ گزینوں کی واپسی کا معاملہ برما کی حکومت کیساتھ اٹھایا جائے گا۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ ریاستی حکومتوں کے نام ایک ایڈوائزری جاری کی گئی ہے جس میں ان سے کہا گیا ہے کہ وہ روہنگیا پناہ گزینوں کو شناختی دستاویزات فراہم نہ کرے ۔ ان کا کہنا تھا ‘ہم نے ریاستی حکومت سے کہا ہے کہ روہنگیا پناہ گزینوں کو ایسے دستاویزات فراہم نہ کئے جائیں جن کی بدولت وہ کل ہندوستانی شہری ہونے کا دعویٰ کریں گے ‘۔مسٹر راجناتھ سنگھ نے ان باتوں کا اظہار گذشتہ شام یہاں پریس کانفرنس میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کیا۔ سوال کرنے والے نامہ نگار نے دعویٰ کیا کہ وزارت داخلہ کی ہدایات کے برعکس جموں میں مقیم روہنگیا پناہ گزینوں کو شناختی دستاویزات فراہم کئے جارہے ہیں۔روہنگیا پناہ گزینوں کے بارے میں مرکزی حکومت کے موقف کے بارے میں پوچھے جانے پر وزیر داخلہ نے کہا ‘اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ روہنگیا (مسلمان) برما سے آئے ہیں۔ برما سے آئے ہیں، اس لئے انہیں برما جانا چاہیے ۔ اور وہ برما جائیں گے ۔ وزارت داخلہ سے ہم نے تمام ریاستی حکومت کو یہ لکھا ہے کہ اگر آپ کی ریاست میں روہنگیا رہ رہے ہیں تو ان کی شناخت کی جائے ۔ ان کا بائیو میٹرک حاصل کیا جائے ۔ ساتھ ہی ساتھ ان کا سروے بھی کیا جائے ۔ کتنی تعداد میں روہنگیا وہاں مقیم ہیں اس کی جانکاری مرکزی حکومت کو فراہم کی جائے ‘۔ انہوں نے روہنگیا پناہ گزینوں کے حوالے سے وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کردہ ایڈوائزری کے بارے میں کہا ‘ہم نے ریاستی حکومتوں سے ایک احتیاطی اقدام اٹھانے کیلئے کہا ہے ۔ ہم نے ریاستی حکومتوں سے کہا ہے کہ روہنگیا پناہ گزینوں کو کوئی ایسا دستاویز نہیں دیا جانا چاہیے جن کی مدد سے وہ مستقبل میں ہندوستانی شہری ہونے کا دعویٰ کریں گے ۔ یہ ایڈوائزری تمام ریاستی حکومتوں کو بھیجی گئی ہے۔ راجناتھ نے کہا کہ ریاستی حکومت سے روہنگیا پناہ گزینوں کی تعداد جاننے کے بعد ان کی واپسی کا معاملہ برما کی حکومت کیساتھ اٹھایا جائے گا۔ انہوں نے کہا ‘ریاستی حکومت کی طرف سے حاصل کی جانے والی تفصیلات کہ وہاں کتنے روہنگیا پناہ گزین مقیم ہیں، ہم اس معاملے کو وزارت خارجہ کے سپرد کریں گے ۔ اس کے بعد برما حکومت سے بات چیت کرکے ان کے واپس بھیجنے کی کاروائی شروع کریں گے۔ حکومتی اعداد وشمار کے مطابق جموں کے مختلف حصوں میں مقیم برما کے تارکین وطن کی تعداد محض 5,700 ہے۔ یہ تارکین وطن جموں میں گذشتہ ایک دہائی سے زیادہ عرصہ سے مقیم ہیں۔

TOPPOPULARRECENT