Tuesday , December 12 2017
Home / کھیل کی خبریں / رہانے کی دوسری اننگز میں بھی سنچری، ہندوستان 267/5 ڈکلیرڈ

رہانے کی دوسری اننگز میں بھی سنچری، ہندوستان 267/5 ڈکلیرڈ

آخری ٹسٹ میچ ڈرا کرنے جنوبی افریقہ کی کوشش، 72 اوورس میں 72 رنز بنے ، ہاشم آملہ کے 207 گیندوں میں صرف 23 رنز
نئی دہلی۔6 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) اجنکیا راہانے کو دونوں اننگز میں متواتر سنچری بنانے کا منفرد اعزاز حاصل ہوا جبکہ ہندوستان کو جنوبی افریقہ کے خلاف چوتھے اور آخری ٹیسٹ میچ کے کل آخری دن 8 وکٹس حاصل کرنے ہوں گے ۔ اگر ہندوستان کل اس مقصد میں کامیاب ہوتا ہے تو وہ جنوبی افریقہ کے خلاف 3-0 سیریز کی تاریخی کامیابی حاصل کرے گا۔ جنوبی افریقہ کو کامیابی کے لئے 481 رنز کا نشانہ دیا گیا ہے اور اس کے تعاقب میں مہمان ٹیم نے محتاط کھیل جاری رکھا۔ آج فیروزشاہ کوٹلہ گرائونڈ پر چوتھے دن کا کھیل ختم ہونے تک جنوبی افریقہ نے 72 اوورس میں 72/2 رنز بنائے۔ جنوبی افریقہ کے کپتان ہاشم آملہ کی تمام تر کوشش یہی ہوگی کہ میچ کو کم از کم ڈرا کیا جائے اور آج انہوں نے ایک صبر آزما اننگ کھیلتے ہوئے 207 گیندوں میں 23 رنز بنائے۔ اجنکیا رہانے کی 206 گیندوں میں 100 ناٹ آئوٹ رنز کے بعد میزبان ٹیم نے اپنی دوسری اننگ 267/5 پر ڈکلیر کردیا۔ اس میچ میں رہانے کی یہ دوسری سنچری تھی اور جیسے ہی انہوں نے 100 رنز پورے کیئے کپتان وراٹ کوہلی نے اننگ ختم کرنے کا اعلان کیا۔ رہانے نے اپنے کیریئر کی یہ چھٹی سنچری بنائی اور وہ ان مایاناز ہندوستانی کرکٹرز میں شامل ہوگئے جنہوں نے ٹسٹ میچ کی دونوں اننگز میں سنچریاں اسکور کی ہیں۔ آنجہانی وجئے ہزارے نے ایک مرتبہ، سنیل گواسکر تین مرتبہ، راہول ڈراویڈ دو مرتبہ اور ویراٹ کوہلی کو ایک مرتبہ یہ اعزاز حاصل ہوا ہے۔ فیروز شاہ کوٹلہ گرائونڈ پچ کی کو دیکھتے ہوئے یہ کہا جاسکتا ہے کہ ہندوستان کو اس ٹسٹ میچ میں کامیابی ملے گی

لیکن رویندر جڈیجہ (23 اوورس میں 0/10) اور روی چندرن اشون (23 اوورس میں 2/29) کے لئے کل مابقی 8 وکٹس کا حصول ایک چیلنج ہوگا۔ اے بی ڈیولیئرس 11 رنز پر کھیل رہے ہیں اور کپتان ہاشم آملہ نے صبر اننگ کے ذریعہ ہندوستانی بولرس کو جدوجہد سے دوچار کر رکھا ہے۔ اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ کپتان ویراٹ کوہلی نے شکھر دھون اور مرلی وجئے کو بولنگ کی ذمہ داری سونپی تاکہ کچھ نیا کیا جائے اور کوئی مثبت نتیجہ برآمد ہوسکے۔ ڈیولیئرس نے 91 گیندوں میں 11 رنز بنائے اور ہاشم آملہ

۔ڈیولیئرس پارٹنرشپ کا پہلا رن 63 گیندوں کے بعد بنا۔ ان دونوں نے 29.2 اوورس میں 23 رنز جوڑے۔ پہلے سیشن میں 33 اوورس کے دوران صرف 32 رنز ہی بن پائے اور بیٹسمین کو اپنے وکٹس بچانے کی کوشش میں مصروف دیکھا گیا۔ ہاشم آملہ نے کھاتہ کھولنے کے لئے 46 گیندوں تک انتظار کرایا اور ابتدائی 100 گیندوں میں انہوںنے صرف 6 رنز بنائے تھے۔ اگر آملہ اور ان کی ٹیم اس ٹسٹ میچ کو بچانے میں کامیاب رہتی ہے تو یقینا کرکٹ کی تاریخ کا یہ ایک صبرآزما ٹسٹ کہلائے گا۔ آملہ پہلے رن کے لئے 46 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے سست بیٹنگ میں چوتھے مقام پر پہنچ گئے۔ اس سے پہلے جان مرے (انگلینڈ ) نے 1962ء میں آسٹریلیا کے خلاف 80 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے اپنا کھاتہ کھولا تھا۔ اسٹارٹ براڈ نے 2013ء میں نیوزی لینڈ کے خلاف 62 گیندوں کا سامنا کرنے کے بعد پہلا رن بنایا اور گرانٹ فلاور نے 2000ء میں نیوزی لینڈ کے خلاف 51 گیندوں کے بعد پہلا رن اسکور کیا۔

اوپنر ٹمبا بائوما نے 117 گیندوں میں 34 رنز بنائے اور روی چندرن اشون کی گیند پر 3 چوکوں کے علاوہ ایک چھکا لگایا۔ پہلی مرتبہ ایسا ہوا ہے کہ جنوبی افریقہ کے دونوں بیٹسمین نے اس سیریز میں سنگل اننگ کے دوران فی کس 100 گیندوں کا سامنا کیا ہے۔ ان سب کے باوجود مہمان ٹیم کو کامیابی کے لئے 476 رنز درکار ہیں۔ قبل ازیں رہانے نے ایک بار پھر شاندار کھیل کا مظاہرہ کرتے ہوئے 127 رنز بنائے جن میں 8 چوکے اور 3 چھکے شامل ہیں۔ انہوں نے 206 گیندوں کا سامنا کیا۔ وریدھیمان ساہا(23 ناٹ آئوٹ) نے صرف 14.1 اوورس میں رہانے کے ساتھ 56 رنز جوڑے۔ کپتان کوہلی (88) کو یقینا مایوسی کا سامنا کرنا پڑا جو 12 ویں ٹسٹ سنچری سے محروم رہے۔ انہوں نے کل 83 کے اسکور کو آگے بڑھانے کی کوشش میں صرف 5 رنز کا ہی اضافہ کرپائے۔ کوہلی نے 165 گیندوں کا سامنا کیا اور 10 چوکے لگائے۔ رہانے اور کوہلی نے پانچویں وکٹ کی رفاقت کے لئے 154 رنز جوڑے اور جاریہ سیریز کے دوران یہ سب سے بڑی پارٹنرشپ رہی۔

TOPPOPULARRECENT