Tuesday , August 21 2018
Home / شہر کی خبریں / ریاست آندھراپردیش میں گروہ واری تنازعات کا پھر ایک بار آغاز

ریاست آندھراپردیش میں گروہ واری تنازعات کا پھر ایک بار آغاز

ایک دوسرے پر شخصی تنقیدیں ، مئیر اننت پور کی جے سی دیواکر ریڈی پر سخت تنقید
حیدرآباد /20 ڈسمبر ( سیاست نیوز ) ریاست آندھراپردیش کے ضلع اننت پور تلگودیشم پارٹی میں پائی جانے والی گروپ ازم اور گروہی تنازعات کے سلسلہ کا پھر ایک بار آغاز ہوا ہے اور یہ تنازعات ایک دوسرے کے خلاف شخصی تنقیدوں تک پہونچ چکے ہیں ۔ مئیر میونسپل کارپوریشن اننت پور شریمتی سواروپا رانی نے رکن پارلیمان اننت پور مسٹر جے سی دیواکر ریڈی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جے سی دیواکر ریڈی ترقی میں روکاٹ پیدا کرنے والے راکشس ہیں ۔ میونسپل کارپوریشن اننت پور کی جانب سے 100کروڑ روپیوں کے مصارف ترقیاتی کاموں کی انجام دہی کے باوجود سیاہ چشمہ لگا رکھنے والے جے سی دیواکر ریڈی کو دکھائی نہیں دے رہے ہیں ۔ لہذا شریمتی سواروپا مئیر میونسپل کارپوریشن اننت پور نے رکن پارلیمان مسٹر جے سی دیواکر ریڈی سے اپنا سیاہ چشمہ فوری اتارکر سفید چشمہ لگالینے کا مشورہ دیا ۔ انہوں نے آج اننت پور میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ صرف برائے نام تین ماہ میں ایک مرتبہ اننت پور آنے والے جے سی دیواکر ریڈی میونسپل کارپوریشن حدود میں انجام پانے والے ترقیاتی کاموں پر کم از کم نظر ڈالے بغیر تنقید کرنے کو اپنا طریقہ کار بنالیا ہے ۔ مسٹر جے سی دیواکر ریڈی صرف تلک روڈ ، سوریہ نگر کی طرف ہی نظریں دوڑاتے ہیں ۔ لیکن بحیثیت رکن پارلیمان اننت پور شہر ( ٹاون ) کی ترقی کیلئے اب تک آدھا روپیہ ( پچاس پیسے ) بھی خرچ نہیں کئے ۔ مئیر کارپوریشن نے مسٹر جے سی دیواکر ریڈی کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انہیں مشورہ دیا کہ ہم ( میونسپل کارپوریشن ) انجام دینے والے ترقیاتی کاموں میں رکاوٹیں پیدا کرنے کی کوششوں کو ختم کرکے کم از کم اب تو اچھے کام کرکے سیاست سے سبکدوشی اختیار کرنا بہت ہی بہتر بات ہوگی ۔

TOPPOPULARRECENT