Monday , November 20 2017
Home / شہر کی خبریں / ریاست میں رقومات کی کوئی کمی نہیں، اسکیمات پر عمل کیلئے اعداد وشمار کے مطابق آمدنی

ریاست میں رقومات کی کوئی کمی نہیں، اسکیمات پر عمل کیلئے اعداد وشمار کے مطابق آمدنی

حیدرآباد ۔ 22 اگست (سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ میں آمدنی اور مصارف (خرچ) مساوی ہیں اور فلاح و بہبودی اسکیمات کی عمل آوری کیلئے فنڈز (رقومات) فراہم نہ کئے جانے کے الزامات غلط اور بے بنیاد ہیں۔ آج یہاں سکریٹریٹ میں اعلیٰ عہدیداران محکمہ فینانس کے ساتھ حکومت کے مالی موقف کا اجلاس طلب کرکے تفصیلی جائزہ لیا اور بتایا جاتا ہیکہ وزیرفینانس مسٹر ای راجندر نے عہدیداران محکمہ فینانس سے حکومت کو حاصل ہونے والی آمدنی اور حکومت کے مختلف فلاح و بہبودی پروگراموں وغیرہ پر خرچ ہونے والی رقومات کی مکمل تفصیلات حاصل کیں اور جائزہ اجلاس کے اختتام پر اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے وزیرفینانس مسٹر ای راجندر نے واضح طور پر کہا کہ ریاست تلنگانہ میں رقومات کی کوئی کمی نہیں ہے۔ تاہم آمدنی کے مساوی مصارف بھی کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ سالانہ بجٹ میں آمدنی اور اسکیمات کی عمل آوری کیلئے دیئے جانے والے فنڈز کے جو اعداد و شمار پیش کئے گئے تھے، اس کے مطابق آمدنی حکومت کو حاصل ہورہی ہے اور اسی طرح رقومات مختلف فلاح و بہبودی اسکیمات کی عمل آوری کیلئے جاری (خرچ) کئے جارہے ہیں۔ وزیرموصوف نے کہا کہ حکومت نے اراضیات کی فروخت کے ذریعہ جتنی رقومات حاصل ہونے کا اندازہ کیا تھا، حکومت کو اتنی رقومات حاصل نہیں ہوئی ہیں جن کی وجہ سے حکومت کو مختلف اغراض کیلئے عائد ہونے والے مصارف کیلئے رقومات کی اجرائی پر بعد غوروخوض جاری کرنا پڑ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو محاصل (ٹیکسیس) کی شکل میں حاصل ہونے والی رقومات نشانہ کے مطابق وصول ہورہی ہیں۔ مسٹر ای راجندر نے واضح طور پر کہا کہ حکومت کی جانب سے روبہ عمل لائے جانے والے ترقیاتی پروگراموں و اسکیمات کیلئے ہرگز رقومات کی کوئی کمی نہیں ہے۔ علاوہ ازیں وزیرموصوف نے کہا کہ حکومت مختص کردہ رقومات یا مختلف اسکیموں و پروگراموں کیلئے حاصل ہونے والی رقومات کو کسی اور اغراض کیلئے استعمال کرنے یا رقومات کی اجرائی میں کوئی مبینہ بے قاعدگیاں نہ ہونے کیلئے آڈٹ کروائی جارہی ہے۔ بالخصوص اضلاع میں 10 فیصد تک آڈٹ کرواکر بعض غلطیوں کی نشاندہی کی گئی ہے اور ٹریژری سے غیرمجاز طور پر رقومات کی منتقلی جیسے موضوعات کی بھی نشاندہی کی گئی ہے۔ مسٹر ای راجندر نے مزید کہا کہ اس طرح رقومات کی اجرائی اور خرچ میں باقاعدگی پیدا کرنے کیلئے کئے جانے والے اقدامات کی وجہ سے حکومت تلنگانہ کو رقومات کے مسئلہ پر کوئی خطرہ نہیں ہے کیونکہ اب تک ہی حکومت کو حاصل ہونے والی آمدنی کا 93 فیصد نشانہ مکمل ہوچکا ہے۔ انہوں نے اپوزیشن جماعتوں کو اپنی سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن جماعتیں حقائق سے واقفیت رکھے بغیر غلط اعداد و شمار کا اظہار کرتے ہوئے غلط بیانی سے کام لیتے ہوئے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ وزیرفینانس نے کہا کہ غیرمجاز کشیدہ کئے جانے والے گڑمبہ کی مکمل روک تھام کرنے اور تیاری کے خلاف سخت ترین اقدامات کرنے کیلئے حکومت تلنگانہ سستی شراب پالیسی کو روبہ عمل لانے کیلئے اقدامات کررہی ہے جبکہ کسانوں کے قرضہ جات کی ادائیگی، طلباء کو فیس ری ایمبرسمنٹ کی ادائیگی کیلئے مؤثر اقدامات کئے جارہے ہیں۔ آروگیہ شری اسکیم کے تحت طبی امداد حاصل کرنے والوں کو کوئی مشکلات پیش نہ آنے جیسے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ وزیر موصوف نے مزید بتایا کہ محکمہ جات ریونیو، فینانس اور ٹریژری کے ذریعہ رقومات کی اجرائی میں بعض بے قاعدگیوں کے واقعات پیش آنے کی آڈٹ کے ذریعہ نشاندہی کی گئی۔ لہٰذا آئندہ اس طرح کی بے قاعدگیاں پیش نہ آنے کیلئے مؤثر اقدامات کئے جارہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT