Sunday , June 24 2018
Home / Top Stories / ریاست کے تمام واقعات کا چیف منسٹر ذمہ دار ،گجرات فسادات کے پس منظر میں بیان

ریاست کے تمام واقعات کا چیف منسٹر ذمہ دار ،گجرات فسادات کے پس منظر میں بیان

نئی دہلی 17 مارچ (سیاست ڈاٹ کام )چیف منسٹر کو اس کی ریاست میں اپنی زیر نگرانی ہونے والے فسادات کی ذمہ داری قبول کرنی چاہئے۔ نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے صدر شرد پوار نے آج 2002 کے گجرات فرقہ وارانہ فسادات کے پس منظر میں یہ تبصرہ کیا۔ ’’اگر میں چیف منسٹر ہوں اور میری ریاست میں کچھ پیش آتا ہے تو مجھے ذمہ داری قبول کرنی ہوگی۔ میں انکار نہیں کر

نئی دہلی 17 مارچ (سیاست ڈاٹ کام )چیف منسٹر کو اس کی ریاست میں اپنی زیر نگرانی ہونے والے فسادات کی ذمہ داری قبول کرنی چاہئے۔ نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے صدر شرد پوار نے آج 2002 کے گجرات فرقہ وارانہ فسادات کے پس منظر میں یہ تبصرہ کیا۔ ’’اگر میں چیف منسٹر ہوں اور میری ریاست میں کچھ پیش آتا ہے تو مجھے ذمہ داری قبول کرنی ہوگی۔ میں انکار نہیں کرسکتا ۔ ہوسکتا ہے کہ میں راست ملوث نہ ہوں

لیکن بحیثیت چیف منسٹر ،وزیر داخلہ اور منتظم میرے خیال میں میری ذمہ داری ہے کہ شہریوں کے مفادات کا تحفظ کروں‘‘۔ وہ این ڈی ٹی وی پر بیان دے رہے تھے ان سے چیف منسٹر گجرات نریندر مودی کے 2002 کے فسادات کا ذمہ دار ہونے یا نہ ہونے کے بارے میں موقف دریافت کیا گیا تھا وہ اپنے سابقہ بیان میں کہہ چکے ہیں کہ مودی کو فرقہ وارانہ تشدد کیلئے مزید ذمہ دار قرار نہیں دیا جانا چاہئے چونکہ عدالت نے چیف منسٹر گجرات کو بری کردیا ہے۔ پوارنے کہا تھا کہ عدالتی فیصلہ تسلیم کیا جانا چاہئے۔ پوار نے یہ بھی کہا کہ گجرات کی ترقی صرف ایک چیف منسٹر کی دین نہیں ہے کئی چیف منسٹرس چمن بھائی پٹیل سے لیکر دیگر تک اچھا کام کرچکے ہیں۔مرکزی وزیر زراعت نے مودی کے ساتھ ان کے تعلقات کے بارے میں سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ بیشتر قائدین بشمول مودی سے ان کے تعلقات خوشگوار ہیں۔

راہول گاندھی کے انٹرویوزبچکانہ :روی شنکر پرساد
٭٭بھارتیہ جنتا پارٹی کے قائد روی شنکر پرساد نے کہا کہ نائب صدر کانگریس راہول گاندھی کے انٹرویوزایسا معلوم ہوتا ہے کہ کسی نرسری کے طالبعلم کے انٹرویو ہیںجن کی بنیاد جھوٹ پر ہے۔ سپریم کورٹ نے گجرات فسادات کی تحقیقات میں خلوص دیکھا اس کے باوجود راہول گاندھی عدالت کے فیصلہ پر یقین نہیں کرتے ۔

روی شنکر پرساد نے کہا کہ وہ کانگریس زیر سرپرستی فسادات کے بارے میں خاموش ہیں۔ ان کے پاس ان سوالات کا کوئی جواب نہیں ہے کہ کونسے انتخابات کرپشن کے بغیر ،ترقی کے فقدان اور افراط زر وغیرہ کے ساتھ نہیںلڑے گئے۔ وہ ان تمام باتوں پر عوام کو تقسیم کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ راہول گاندھی اور کانگریس کے پاس اُس انتشار کے بارے میں کوئی جواب نہیں ہے جو ان کی تخلیق ہے۔ راہول گاندھی نے پی ٹی آئی کو انٹرویو دیتے ہوئے 2002 کے گجرات فسادات کے دوران حکمرانی کی واضح اور نا قابل معافی ناکامی کیلئے قانونی جوابدہی کا مطالبہ کیا تھا اور مودی کو بے قصور قرار دینا سیاسی مفادات پر مبنی اور انتہائی قبل از وقت قرار دیا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ بی جے پی افراد کے ہاتھوں میں اقتدار مرکوز کرنا چاہتی ہے۔موجودہ انتخابات کو انہوں نے نظریات کی جنگ قرار دیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT