Thursday , December 14 2017
Home / کھیل کی خبریں / ریسلر نرسنگ ڈوپ ٹسٹ میں ناکام، ریو اولمپکس جتھے سے خارج

ریسلر نرسنگ ڈوپ ٹسٹ میں ناکام، ریو اولمپکس جتھے سے خارج

ریسرچ فیڈریشن اور نرسنگ یادو کو سازش کا شبہ ، ممنوعہ ادویات کے استعمال کی تردید
نئی دہلی۔ 24 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان کی اولمپک تیاریوں کو آج زبردست دھکہ لگا جب اس کے ریسلر نرسنگ یادو کو جنہیں مشہور و معروف ریسلر سشیل کمار کو نظرانداز کرتے ہوئے ہندوستانی جتھے کیلئے منتخب کیا گیا تھا۔ ڈوپ ٹسٹنگ کے ایک معائنہ میں ناکامی کے بعد آئندہ ماہ ہونے والے ریو اولمپکس سے خارج کردیا گیا ہے۔ ممنوعہ ادویات ڈوپنگ کے انسداد سے متعلق قومی ادارہ کے ڈائریکٹر جنرل نوین اگروال نے توثیق کی کہ ممنوعہ ادویات کی جانچ میں نرسنگ کے ’بی‘ نمونے بھی مثبت پائے گئے۔ ذرائع نے کہا کہ ممنوعہ دوا متھا نڈ ائیوان  کے استعمال کیلئے کیا گیا معائنہ مثبت ثابت ہوا۔ نوین اگروال نے کہا کہ ’’جی ہاں! ممنوعہ اسٹیرئیوڈس کیلئے ان (نرسنگ) کا معائنہ مثبت رہا ہے۔ ان کا بی نمونہ بھی مثبت تھا۔ بی نمونہ کی کشادگی کے وقت نرسنگ شخصی طور پر موجود تھے‘‘۔ انہوں نے مزید کہا کہ ’’وہ (نرسنگ) گزشتہ روز تادیبی پینل پر حاضر ہوئے تھے اور پینل نے مزید رپورٹس طلب کی تھی۔ ہم مزید رپورٹس فراہم کریں گے۔ میں توقع کرتا ہوں کہ پینل جلد اپنی کارروائی مکمل کرے گا۔ اس وقت تک ہمیں انتظار کرنا ہوگا۔ اس سوال پر کہ آیا نرسنگ اب ریو اولمپکس سے محروم رہیں گے؟

اگروال نے جواب دیا کہ اس ضمن میں فی الحال کوئی تبصرہ کرنا قبل از وقت ہوگا۔ ’’ہم (جانچ کے عمل کو) جلد مکمل کرلیں گے۔ میں اس مسئلہ پر کوئی قیاس آرائی نہیں کرسکتا‘‘۔ تاہم نرسنگ اور ریسلنگ فیڈریشن آف انڈیا کے قریبی ذرائع نے اس ضمن میں سازش کا الزام عائد کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ یہ سارا معاملہ محض ایک سازش معلوم ہوتا ہے۔ ریسلنگ فیڈریشن کے ذرائع نے کہا کہ ’’یہ ایک سبوتاج ہے اور گہری سازش ہے۔ نرسنگ ایک صاف ستھرا ریکارڈ رکھتے ہیں اور واضح طور پر یہ ان کے خلاف ایک سازش ہے۔ 74 کیلو زمرہ میں ہندوستان کی نمائندگی کیلئے متعاقب فیصلہ کیا جائے گا، لیکن اس بات کا اغلب امکان ہے کہ ریو میں 74 کیلو کے زمرہ میں ہندوستان کی کوئی نمائندگی نہیں رہے گی۔ نرسنگ کو اب عبوری طور پر معطل کیا جاچکا ہے‘‘۔ نرسنگ نے گزشتہ سال برونز میڈل جیت کر اولمپکس کے 74 کیلو زمرہ میں اپنی جگہ بنائی تھی جنہیں دو اولمپکس میڈل حاصل کرنے والے سشیل کمار کو نظرانداز کرتے ہوئے متنازعہ انداز میں ریو کیلئے منتخب کیا گیا تھا جس کے خلاف کمار کی اپیل کو ریسلنگ فیڈریشن آف انڈیا اور دہلی ہائیکورٹ نے مسترد کردیا تھا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT