Thursday , December 14 2017
Home / ہندوستان / ریلویز میں سرمایہ کاری اور جدید ٹکنالوجی کی ضرورت

ریلویز میں سرمایہ کاری اور جدید ٹکنالوجی کی ضرورت

چین کے مقابل میں ہندوستان بہت پیچھے ۔ وزیر ریلوے کا بیان
نئی دہلی ۔ 10 ۔ مئی : ( سیاست ڈاٹ کام) : وزیر ریلوے سریش پربھو نے آج کہا ہے کہ وقت کا تقاضہ ہے کہ عوامی ٹرانسپورٹ کے شعبہ میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کی جائے اور جدید ٹکنالوجی کے بغیر انڈین ریلویز مزید پیش قدمی نہیں کرسکتی ۔ کامریڈ امراؤمل پروہیت میموریل ریسرچ سنٹر کا افتتاح کرنے کے بعد مسٹر پربھو نے کہا کہ ریلویز میں سرمایہ کاری کی اشد ضرورت ہے ۔ چین میں سالانہ 9 تا 10 لاکھ کروڑ روپئے ریلویز میں سرمایہ کاری کی جاتی ہے جب کہ ہندوستان میں یہ سرمایہ کاری 40 ہزار کروڑ تک محدود ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ سرمایہ کاری کے فقدان سے ریلویز کو ٹریفک سے محروم ہونا پڑرہا ہے ۔ جس کے نتیجہ میں ریلوے ٹریفک دوسرے شعبہ میں منتقل ہورہی ہے ۔ لہذا ہم نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ ریلویز میں ممکنہ سرمایہ کاری کی جائے اور آنے والے برسوں میں سرمایہ کاری کے امکانات روشن ہوجائیں گے ۔ انڈین ریلویز کا یو ایس ریل روڈ سرویس Amtrak سے تقابل کرتے ہوئے مسٹر پربھو نے کہا کہ سرمایہ کاری کے فقدان سے یہ سرویس بحران سے دوچار ہوگئی تھی اور ہمیں بھی امسٹرک سے سبق سیکھنا چاہئے ۔ بصورت دیگر انڈین ریلویز کا بھی ایسا ہی حشر ہوگا ۔ ریل آپریشن میں ٹکنالوجی کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے مسٹر سریش پربھو نے کہا کہ بنیادی سہولیات کے علاوہ دنیا کی بہترین ٹکنالوجی کا استعمال کیا جانا چاہئے ۔ لیکن ہمیشہ ٹکنالوجی درآمد نہیں کرسکتے ۔ لہذا ہمیں خود جدید ٹکنالوجی کی ایجاد اور ترقی دینے کی ضرورت ہے ۔ ریلویز ملازمین کے رول پر انہوں نے کہا کہ ریلویز کا انحصار دو پہیوں پر ہے ایک انتظامیہ دوسرا ملازمین ۔ اگر ان میں کوئی ایک بھی کام نہیں کرے گا تو ریلویز کو چلانا مشکل ہوجائے گا ۔ انہوں نے ریلویز کی ترقی میں رکاوٹ پیدا کرنے پر یونینوں کو بھی خبردار کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT