Thursday , October 18 2018
Home / ہندوستان / ریلوے بجٹ میں نقش راہ اور منزل کا فقدان

ریلوے بجٹ میں نقش راہ اور منزل کا فقدان

نئی دہلی۔/12مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) لوک سبھا میں آج اپوزیشن نے ریلویز میں سرمایہ کاری پر نقش راہ ( روڈ میاپ ) پیش کرنے میں ناکامی پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا اور دریافت کیا کہ ایندھن کی قیمتوں میں تیزی کے ساتھ گراوٹ کے باعث آیا ریلوے کرایوں میں کمی کی جائے گی۔ ریلوے بجٹ پر مباحث میں حصہ لیتے ہوئے مسٹر ایم کے راگھون ( کانگریس ) نے کہا

نئی دہلی۔/12مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) لوک سبھا میں آج اپوزیشن نے ریلویز میں سرمایہ کاری پر نقش راہ ( روڈ میاپ ) پیش کرنے میں ناکامی پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا اور دریافت کیا کہ ایندھن کی قیمتوں میں تیزی کے ساتھ گراوٹ کے باعث آیا ریلوے کرایوں میں کمی کی جائے گی۔ ریلوے بجٹ پر مباحث میں حصہ لیتے ہوئے مسٹر ایم کے راگھون ( کانگریس ) نے کہا کہ بجٹ میں آئندہ 5سال کے دوران 8لاکھ کروڑ کی سرمایہ کاری کیلئے وسائل اور ذرائع کی تفصیلات فراہم نہیں کی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سرمایہ کاری کیلئے عملی منصوبہ کے بغیر اعداد و شمار سے کھیلا گیا اور رنگیں خواب دکھائے گئے ہیں۔ یہ بجٹ انتہائی مایوس کن اور عام آدمی کو یکسر نظر انداز کردیا گیا ہے اور حکومت روڈ میاپ پیش کرنے میں ناکام ہوگئی ہے۔ طارق انور ( این سی پی ) نے بی جے پی کی زیر قیادت حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بتایا کہ گزشتہ سال مئی میں ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ کا بہانہ بناکر ریل کرایوں میں اضافہ کردیا گیا تھا اور وزیر ریلوے سریش پربھو سے دریافت کیا کہ اب جبکہ آئیل کی قیمتوں میں زبردست گراوٹ آگئی ہے جس کے پیش نظر مسافرین کے کرایوں میں کمی کی جائے گی۔

انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ مسافرین کے کنفارمڈ ریزرویشن کو یقینی بنانے کیلئے ٹھوس اقدامات کئے جائیں جبکہ طنزیہ انداز میں سماج وادی پارٹی کے رکن اکشے یادو نے پارلیمنٹ کی ریلوے کینٹین میں وزیر اعظم نریندر مودی کے ظہرانہ ( لنچ ) کا خیرمقدم کیا لیکن کہا کہ ارکان پارلیمنٹ کو چاہیئے کہ ٹرینوں میں عام مسافرین کو فراہم کی جانے والی غذا استعمال کریں اور وی آئی پی کلچر ترک کردیں۔ انہوں نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ نئی ٹرین جن سادھرن میں 60فیصد نشستیں غریبوں اور کسانوں کیلئے ریزرویشن کے بغیر مختص کی جائیں اور ہر ایک ٹرین میں کم از کم 6جنرل کمپارٹمنٹ لگائے جائیں۔ تپاس منڈل ( ٹی ایم سی) نے ریلوے بجٹ پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھر میں ریلوے پراجکٹس کیلئے فنڈس کی فراہمی کا فقدان پایا جاتا ہے۔ ریلویز کو معاشی طور پر خود کفیل بنانے کی ضرورت کو اُجاگر کرتے ہوئے وجئے ہنسڈکر ( جے ایم ایم ) نے کہا کہ اسے ایف ڈی آئی اور عوامی ۔ خانگی شراکت داری پر منحصر نہیں ہونا چاہیئے تاہم ہیما مالنی ( بی جے پی ) نے ریلوے بجٹ کو قابل عمل قرار دیا اور کہا کہ یہ مودی اکسپریس کی طرح نظر آتا ہے جوکہ صحیح سمت میں سفر کررہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT