Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / زرعی قرض کی معافی کے مطالبہ پر آج اپوزیشن جماعتوں کا تلنگانہ بند

زرعی قرض کی معافی کے مطالبہ پر آج اپوزیشن جماعتوں کا تلنگانہ بند

کانگریس ‘ تلگودیشم ‘ بی جے پی اور تمام جماعتوں کی عوام سے بند کو کامیاب بنانے کی اپیل

حیدرآباد /9 اکٹوبر ( پی ٹی آئی ) کانگریس ، ٹی ڈی پی ، بی جے پی اور دیگر اپوزیشن پارٹیوں کی جانب سے 10 اکٹوبر کو تلنگانہ میں مشترکہ بند منایا جائے گا ۔ ٹی آر ایس حکومت کے قرض معافی وعدہ کو پورا کرنے کے مطالبہ کی تائید میں اس کا اعلان کیا گیا ہے اگر قرضوں کو معاف کیا جائے گا تو کسان ربیع کیلئے نیا قرض حاصل کریں گے اور اگر خشک سالی سے متاثرہ منڈلس کا اعلان کیا جائے تو انہیں سبسیڈیز اور ریلیف حاصل ہوگی ۔ تمام سیاسی پارٹیوں اور تنظیموں کامطالبہ ہے کہ اس پر عمل کیا جائے ۔ ضلع کھمم میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے اپوزیشن قائد کے جاناریڈی نے کہا کہ اسمبلی میں اس مسئلہ کے حل کیلئے ہم نے اصرار کیا ہے ۔ گریٹر حیدرآباد کانگریس کمیٹی صدر دانم ناگیندر اور دیگر قائدین نے شہر میں ریالی کا اہتمام کیا اور عوام سے اپیل کی کہ بند کو کامیاب بنائیں ۔ٹی ڈی پی اور بی جے پی کے ایم ایل ایز اور دیگر قائدین نے آج ضلع کلکٹر رنگاریڈی کے دفتر پر احتجاج کیا ۔ کل کے بند کے ضمن میں اس ہفتہ ریاست بھر میں اپوزینش پارٹیوں نے احتجاج درج کروایا ۔ اس مسئلہ پر انتشار کی کارروائی کیلئے قانون ساز اسمبلی سے 30 ارکان اسمبلی کو معطل کرنے کے بعد انہوں نے احتجاج کا آغاز کیا تھا ۔ کانگریس ، ٹی ڈی پی ، بی جے پی ، سی پی آئی ، سی پی آئی ( ایم ) ارکان نے قانون ساز اسمبلی کے سیشن کے دوران مطالبہ کیا تھا کہ ٹی آر ایس حکومت فارم لونس کی معافی عمل میں لائے ۔ ریاستی حکومت نے کہا کہ وہ ایک مرتبہ قرضوں کی معافی کیلئے سنجیدہ کوششیں کرے گی ۔ قبل ازیں 8000 کروڑ روپئے کے قرض معاف کئے گئے ہیں لیکن اپوزیشن پارٹیوں نے اصرار کیا کہ یکمشت قرض معافی کی عمل آوری کی جائے اور مشترکہ طور پر تلنگانہ بند کا اعلان کیا ۔ اپوزیشن کے الزامات کو رد کرتے ہوئے ریاستی وزیر زراعت پوچارم سرینواس ریڈی نے کہا کہ ریاستی حکومت کسانوں کی مدد کی خاطر کوششیں کر رہی ہے ۔ کانگریس کی جانب سے کی گئی بس یاترا کسانوں کی مدد نہیں کرے گی ۔

TOPPOPULARRECENT