Saturday , December 15 2018

زچگی خانہ سلطان بازار میں 8 گھنٹے برقی مسدود

کوئی پرسان حال نہیں، مریضوں کو دشواریوں کا سامنا

کوئی پرسان حال نہیں، مریضوں کو دشواریوں کا سامنا
حیدرآباد 3 مارچ (سیاست نیوز) حکومت تلنگانہ سرکاری دواخانوں کی حالت کو بہتر بنانے کے علاوہ ریاست میں بلا وقفہ برقی سربراہی کو یقینی بنانے اعلانات کررہی ہے لیکن حکومت کے دعوے کس حد تک صحیح ہیں اس کا اندازہ سلطان بازار کوٹھی زچگی خانہ کی حالت کو دیکھ کر لگایا جاسکتا ہے۔ زچگی خانہ کوٹھی جوکہ محکمہ صحت کے دفتر سے متصل ہے۔ اس دواخانہ میں زائداز 8 گھنٹے برقی منقطع ہونے کے سبب مریضوں کی حالت انتہائی ابتر رہی اور دواخانہ میں برقی سربراہی منقطع ہونے کے سلسلہ میں جواب دینے کیلئے دستیاب نہیں تھا۔ تفصیلات کے بموجب آج دن میں سلطان بازار زچگی خانہ کی برقی سربراہی منقطع ہوئی لیکن رات 9 بجے تک بھی برقی سربراہی بحال نہیں کی جاسکی۔ اس دوران یہ بات بھی سامنے آئی کہ دواخانہ میں جنریٹر کی عدم موجودگی اور موجودہ جنریٹر کے غیر کارکرد ہونے کی اطلاع ملی۔ زچگی خانہ میں اس وقت نہ صرف کئی مریض موجود تھے بلکہ کئی نومولود بچے اور مریضوں کے رشتہ دار موجود تھے جوکہ کئی تکالیف کا سامنا کرنے پر مجبور رہے۔ کئی رشتہ داروں کو مریض اور نومولود بچوں کو پنکھا کرتے ہوئے دیکھا گیا اور شام ہوتے ہوتے مریض دواخانہ میں روشنی کے لئے اپنے طور پر موم بتی جلاتے دیکھے گئے۔ رات تقریباً 9 بجے بعض ٹیلی ویژن چیانلس پر دواخانہ کی حالت زار کو دکھائے جانے کے فوری بعد عہدیدار حرکت میں آگئے اور خانگی جنریٹر کا انتظام کرتے ہوئے برقی بحال کی گئی۔ بتایا جاتا ہے کہ رات دیر گئے اس مسئلہ پر اعلیٰ برقی عہدیداروں کی ہدایت پر برقی عملہ دواخانہ میں برقی بحالی کے لئے پہنچ گیا جبکہ مریضوں کے رشتہ داروں اور دواخانوں کے عملہ کے بموجب دوپہر سے کئی مرتبہ محکمہ برقی کے عہدیداروں کو مطلع کئے جانے کے بعد بھی برقی ملازمین کی جانب سے معاملہ کو نظرانداز کیا گیا۔ گزشتہ یوم نیلوفر ہاسپٹل میں ایک ہی انجکشن سے تقریباً 60 بچوں کو انجکشن دیئے جانے کا معاملہ سامنے آیا تھا جس کے سبب بچوں کو انفیکشن بھی ہوا۔ حکومت کی جانب سے سرکاری دواخانوں کی حالت پر اختیار کردہ رویہ میں فوری تبدیلی ناگزیر ہے۔ ریاست کے عوام پہلے ہی سوائن فلو جیسے وبائی مرض سے پریشان ہیں۔ اس کے علاوہ سرکاری دواخانوں میں مؤثر علاج کی فراہمی نہ ہونے کی وجہ سے بالخصوص غریبوں کو کافی دشواریوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔حکومت کو اِس ضمن میں توجہ دینا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT