Saturday , November 25 2017
Home / جرائم و حادثات / زہریلی اشیاء سے دودھ کی تیاری، ٹولی گرفتار

زہریلی اشیاء سے دودھ کی تیاری، ٹولی گرفتار

گھٹکیسر میں پولیس کا دھاو۔ 720 لیٹر نقلی دودھ ضبط
حیدرآباد۔/4نومبر، ( سیاست نیوز ) سائبر آباد پولیس نے آج ایک کارروائی کے دوران زہریلی اشیاء سے دودھ تیار کرنے والی ٹولی کو بے نقاب کردیا جو زرعی استعمال میں لائے جانے والے فرٹیلائزرس کے ذریعہ نقلی دودھ تیار کررہے تھے۔ سائبرآباد پولیس کے اسپیشل آپریشن ٹیم نے ایک خفیہ اطلاع پر کارروائی انجام دی اور دو افراد کو گرفتار کرلیا جو گھٹکیسر کے علاقہ میں یہ کارروائی انجام دے رہے تھے ۔ تعجب کی بات تو یہ ہے کہ جاریہ سال انہیںایک کارروائی کے دوران نقلی دودھ تیار کرنے پر گرفتار کیا گیا تھا تاہم چھ ماہ کے وقفہ سے دوبارہ انہوں نے اس کاروبار کو شروع کردیا جو انسانی صحت کیلئے کافی مضر تصور کیا جاتاہے۔ اسپیشل آفیسر ٹیم کے انسپکٹر مسٹر نرسنگ راؤ نے بتایا کہ 720لیٹر نقلی دودھ کو ضبط کیا گیا۔ اس کے علاوہ  40کیلو ناگرجنا یوریا ،18 دودھ کے پاؤڈر کے ڈبے اور 10 تیل کی پیاکٹس سن فلاور آئیل کے علادہ  دیگر اشیاء کو ضبط کرلیا گیا۔ یہ لوگ اس نقلی دودھ کو جو گھٹکیسر کے علاقہ میں تیار کررہے تھے دودھ تیار کرنے کے بعد چائے کی بنڈیوں، ٹھیلہ بنڈیوں اور گھریلو ضروریات کے علاوہ چھوٹے کاروباریوں کو فروخت کرتے تھے۔ پولیس کے مطابق گھٹکیسر سے سکندرآباد تک یہ لوگ دودھ فروخت کرتے تھے۔ کھیتوں میں کھاد اور کیڑے مارنے کیلئے استعمال کئے جانے والے فرٹیلائزر ( یوریا ) کو استعمال میں لاتے ہوئے دودھ تیار کرنا انسانی زندگیوں کیلئے خطرناک ثابت ہوسکتا ہے اور ایک مرتبہ کارروائی کرنے کے بعد دوسری مرتبہ دوبارہ ایسی غیر سماجی حرکت میں ملوث ہونا خود پولیس کیلئے تشویش کا باعث بنا ہوا ہے۔ ان افراد کے خلاف انسداد غنڈہ گردی ایکٹ ( پی ڈی ) ایکٹ کے تحت کارروائی کیلئے ایس او ٹی اور گھٹکیسر پولیس کو پیش کردیا ہے۔ اس خصوص میں انسپکٹر گھٹکیسر پولیس مسٹر پرساد نے بتایا کہ روی اور رشید جاریہ سال جنوری میں اسی طرح کے ایک واقعہ میں گرفتار کرلئے گئے تھے ۔ پولیس مصروف تحقیقات ہے۔

TOPPOPULARRECENT