زیردریافت قیدی کے پاس راشٹرپتی بھون کا نقشہ

لکھنو ، 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال کے ایک زیردریافت قیدی کے قبضے میں راج پتھ اور راشٹرپتی بھون سے متعلق نقشے اور ہند۔ بنگلہ سرحد پر بی ایس ایف چوکیوں کے خاکے پائے گئے، جس کے بعد اتر پردیش پولیس نے اس معاملے کی تحقیقات کیلئے ایک ٹیم مشرقی ریاست کو بھیجی ہے۔ 7 جون کو جیلوں کی ریاست گیر جانچ کے دوران پولیس حکام کو راج پتھ اور راشٹرپ

لکھنو ، 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال کے ایک زیردریافت قیدی کے قبضے میں راج پتھ اور راشٹرپتی بھون سے متعلق نقشے اور ہند۔ بنگلہ سرحد پر بی ایس ایف چوکیوں کے خاکے پائے گئے، جس کے بعد اتر پردیش پولیس نے اس معاملے کی تحقیقات کیلئے ایک ٹیم مشرقی ریاست کو بھیجی ہے۔ 7 جون کو جیلوں کی ریاست گیر جانچ کے دوران پولیس حکام کو راج پتھ اور راشٹرپتی بھون کے نقشوں کے علاوہ بی ایس ایف چوکیوں کے خاکے صدیق علی ( 25 سال) کے پاس سے برآمد ہوئے جو ایک قتل کیس کے سلسلے میں گزشتہ چار سال سے مرادآباد جیل میں قید ہے۔ علی جس کا تعلق مغربی بنگال سے ہے، اسے 2011ء میں گرفتار کیا گیا تھا کہ اس نے ضلع سنبھل میں اپنے ساتھی عمران کو کسی تنازعہ پر ہلاک کردیا تھا۔ پولیس نے بتایا کہ اس کے بیاگ سے ہندی، مندارین اور بنگالی زبانوں میں تحریری نوٹس کے ساتھ دو سل فون میموری کارڈز بھی برآمد کئے گئے ہیں۔ڈی ٹی جی (مرادآباد رینج) اونکار سنگھ نے آج نیوز ایجنسی ’پی ٹی آئی‘ کو بتایا کہ ہم نے مغربی بنگال کو ایک ٹیم بھیجی کی ہے تاکہ اس کے پس منظر کا پتہ چلایا جائے جبکہ اسٹیٹ اے ٹی ایس کو بھی چوکس کردیا گیا۔ جب مندارین میں تحریر سے متعلق دریافت کیا گیا تو علی نے پولیس کو بتایا کہ وہ ایک چینی شہری کو جانتا ہے جس نے اسے یہ زبان سکھائی۔ آئی جی ( لا اینڈ آرڈر ) اے ستیش گنیش نے لکھنو میں کہا کہ اس نے یہ نقشہ گوگل ویب سائٹ سے ڈاؤن لوڈ کیا۔ ابتدائی چھان بین کے مطابق علی نے پولیس اور انٹلیجنس کو بتایا کہ وہ اور اس کا باپ ناصر علی چند سال قبل سنبھل (یو پی) کو منتقل ہوئے اور گوشت برآمد کرنے والی فرم میں مزدور کے طور پر کام کئے۔

TOPPOPULARRECENT