Thursday , September 20 2018
Home / جرائم و حادثات / سائیکل پنکچر ساز کی 100کروڑ سے زائد ملکیت

سائیکل پنکچر ساز کی 100کروڑ سے زائد ملکیت

انکم ٹیکس عہدیداروں کا دھاوا، اندرون 20سال کروڑہا روپیوں کا مالک
حیدرآباد۔/13 جولائی، ( سیاست نیوز) آئی ٹی عہدیداروں کے دھاوؤں میں چونکا دینے والی حقیقت آج اس وقت سامنے آئی جب آئی ٹی عہدیداروں نے ایک ٹائر پنکچر بنانے والے کے مکان پر دھاوا کیا۔ عام طور پر آئی ٹی کے عہدیدارسیاستدانوں، بڑے تاجرین اور کروڑ پتی افراد کے مکانات اور دفاتر پر دھاوا کرتے ہیں۔ لیکن ایک اطلاع پر کارروائی کے بعدخود آئی ٹی عہدیدار بھی سکتہ کا شکار ہوگئے۔ یہ واقعہ ریاست آندھرا پردیش کے ضلع چتور میں پیش آیا۔ واضح رہے کہ دونوں ریاستوں کے بڑے شہروں میں آئی ٹی کے دھاوے جاری ہیں، حیدرآباد میں بھی کل مختلف مقامات پر دھاوے کئے گئے تھے ان دھاؤں کے دوران آئی ٹی عہدیدار چتور کے تروپتی میں ایک مکان پر پہنچے اور کے رمیش کے مکان پر دھاوا کیا۔رمیش سیکل پنکچر کی دکان چلایا کرتا ہے اب وہ کروڑ پتی ہے اور اس کی جائیدادیں 100 کروڑ سے بھی زائد ہیں۔ آئی ٹی عہدیداروں نے اس کی دولت کا اندازہ لگاتے ہوئے دولت کے ذرائع کی جانچ کی۔ بتایا جاتا ہے کہ 20 سال قبل سیکل پنکچر بنانے والا ایک شخص اس عرصہ میں 100 کروڑ سے زائد ملکیت کا مالک بن گیا۔ یہ شخص پنکچر بنانے کے ساتھ سود کا کاروبارکرتا ہے۔ ایڈیشنل جوائنٹ ڈائرکٹر موہن کمار کی قیادت میں 25 افراد پر مشتمل 4 ٹیمیں تشکیل دی گئیں اور علحدہ علحدہ دھاوے کرتے ہوئے آئی ٹی عہدیداروں نے رمیش کی جائیداد کی تفصیلات حاصل کیں۔ ایک الماری جائیداد سے متعلق دستاویزات بھری پڑی تھی۔ ذرائع کے مطابق تروپتی کے اہم جنکشن منچی نیلہ کنٹہ میں 5 منزلہ عمارت اور اس کے قریب ایک 4 منزلہ عمارت کے علاوہ دیگر کئی جائیدادیں پائی جاتی ہیں۔ اس شخص کی اتنے قلیل مدتی عرصہ میں اسطرح کی ترقی کے پیچھے شرح سودکا رول ہے۔ آئی ٹی عہدیداروں کے مطابق رمیش 10فیصد شرح سود لیا کرتا تھا اور ضمانت کے طور پر رکھی گئی جائیدادوں بالخصوص اراضیات کو وہ زبردستی اپنے نام رجسٹرڈ کروالیا کرتا تھا۔ اس طرح 20 سال کے عرصہ میں یہ شخص 100کروڑسے زائد رقم کا مالک بن گیا۔

TOPPOPULARRECENT