Thursday , November 15 2018
Home / Top Stories / سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کا انتقال ۔ 7 روزہ سرکاری سوگ کا اعلان

سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کا انتقال ۔ 7 روزہ سرکاری سوگ کا اعلان

نعش عوامی دیدار کیلئے آنجہانی کی قیامگاہ کو منتقل ۔ سرکاری اعزازات کے ساتھ آخری رسومات آج ادا کی جائیں گی ۔ صدر جمہوریہ ‘ نائب صدر ‘ وزیر اعظم اور دوسروں کا خراج عقیدت

نئی دہلی 16 اگسٹ ( سیاست ڈاٹ کام ) سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کا آج انتقال ہوگیا ۔ ان کی عمر 93 سال تھی ۔ واجپائی بی جے پی کے سب سے کرشماتی قائدین میں شمار کئے جاتے تھے اور وہ ملک کے پہلے غیر کانگریسی لیڈر تھے جنہوں نے بحیثیت وزیر اعظم اپنی میعاد مکمل کی تھی ۔ واجپائی مجرد تھے اور پسماندگان میں ان کی متبنہ دختر نمیتا کول بھٹاچاریہ شامل ہیں۔ واجپائی کو کئی امراض لاحق ہونے پر 11 جون کو آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائینسیس میںشریک کیا گیا تھا جہاں انہوں نے آج 5 بجکر 05 منٹ پر آخری سانس لی ۔ دواخانہ سے جاری کردہ بلیٹن میں ان کے انتقال کی اطلاع دی گئی ۔ دواخانہ کے بیان میں کہا گیا کہ بہت افسوس کے ساتھ یہ اطلاع دی جاتی ہے کہ سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی چل بسے ہیں اور انہوں نے 5.05 بجے آخری سانس لی ۔ دواخانہ کا کہنا تھا کہ گذشتہ 9 ہفتوں کے دوران واجپائی کی حالت مستحکم تھی تاہم گذشتہ 36 گھنٹوں کے دوران ان کی حالت بگڑ گئی تھی اور انہیں مصنوعی آلہ تنفس پر رکھا گیا تھا ۔ دواخانہ کے ڈاکٹر ( پروفیسر ) آرتی وج کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ ممکنہ کوششوں کے باوجود ہم انہیں بچا نہیں سکے اور اس بھاری نقصان پر وہ بھی ساری قوم کے ساتھ ہیں۔ مزید تفصیلات بتاتے ہوئے دواخانہ کے ایک اور ڈاکٹر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ واجپائی کو نمونیا ہوگیا تھا اور ان کے کئی اعضا نے کام کرنا بند کردیا تھا ۔ ان کے گردے فیل ہوگئے تھے اور ان کے قلب اور پھیپھڑوں کا کام کاج بھی متاثرہوگیا تھا ۔ کہا گیا کہ انہیں ایکمو سرکٹ لگایا گیا تھا جو مصنوعی قلب اور پھیپھڑوں کا کام کرتا ہے ۔ تاہم بعد میں یہ بھی کارآمد ثابت نہ ہوسکا ۔ واجپائی ذیابطیس کا شکار تھے اور ان کا ایک گردہ پہلے ہی ناکارہ ہوگیا تھا ۔ انہیں پیشاب کا انفیکشن ہوگیا تھا اور سینہ میں بھی تکلیف کی شکایت ہوگئی تھی ۔ اس دوران وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اعلان کیا کہ سابق وزیر اعظم کی نعش کو ان کی قیامگاہ لایا جا رہا ہے جہاں انہیںعوام کے دیدار کیلئے رکھا جائیگا ۔ راج ناتھ سنگھ نے آج دن میں ایمس کا دورہ کیا تھا جب واجپائی مصنوعی آلہ تنفس پر تھے ۔ انہوں نے کہا کہ واجپائی کے انتقال سے ملک ایک مدبر سے محروم ہوگیا ہے جنہوں نے ایک ایسے ہندوستان کا خواب دیکھا تھا جہاں تمام شہری مل کر امن و ہم آہنگی سے رہتے ہوں۔ واجپائی کے انتقال پر حکومت نے 7 دن کے سرکاری سوگ کا اعلان کیا ہے اور اس دوران تمام سرکاری عمارتوں پر قومی پرچم نصف بلندی پر لہرایا جائیگا۔ واجپائی کی آخری رسومات تمام سرکاری اعزازات کے ساتھ جمعہ کو شام 4.00 بجے سمرتی استھل میں ادا کی جائیں گی ۔ صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند ‘ نائب صدر جمہوریہ ایم وینکیا نائیڈو ‘ وزیر اعظم نریندر مودی ‘ سابق صدر جمہوریہ پرنب مکرجی ‘ سابق وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ اور کئی دوسروںنے اٹل بہاری واجپائی کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT