Tuesday , November 21 2017
Home / ہندوستان / سابق وزیر اعظم پاکستان لیاقت علی خان کے رشتہ دار کو جعلی سرٹیفکیٹ کی اجرائی

سابق وزیر اعظم پاکستان لیاقت علی خان کے رشتہ دار کو جعلی سرٹیفکیٹ کی اجرائی

مظفر نگر۔/11اگسٹ، ( سیاست ڈاٹ کام ) پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان کے بعض وارثوں کو جعلی سرٹیفکیٹ جاری کرنے پر ایک ریونیو انسپکٹر کو معطل کردیا گیاجبکہ ضلع مظفر نگر میں ان کے کروڑہا روپئے مالیتی جائیدادیں موجود ہیں۔ سب ڈیویژنل مجسٹریٹ اجول کمار نے بتایا کہ ریونیو انسپکٹر تجویر سنگھ ایک شخص جمشید علی خان اور دیگر کو صداقتنامہ اور وراثت جاری کیا ہے جنہوں نے یہ ادعاء کیا ہے کہ وہ پاکستان کے سابق وزیر اعظم کے 28 جنوری1977کو وارث بن گئے ہیں۔ یہ معاملہ اس وقت منظر عام پر آیا جب جمشید اور ان کے ساتھیوں نے کروڑہا روپئے مالیتی متنازعہ املاک پر قبضہ کیلئے درخواست پیش کی۔ انہوں نے بتایا کہ تحقیقات کے دوران پتہ چلا کہ یہ سرٹیفکیٹ جعلی اور غیر قانونی ہے جس کے بعدتجویر سنگھ کو معطل کردیا گیا۔ واضح رہے کہ سابق پاکستانی وزیر اعظم لیاقت علی خان جن کا تعلق کرنال میں ایک جاگیر دار گھرانہ سے تھا غیر منقسم پنجاب میں 1926ء تا1940 کے دوران مظفر نگر سے صوبائی قانون ساز کونسل کے رکن کی حیثیت سے خدمات انجام دی تھیں، رشتہ داروں نے اب ان کی جاگیر پر اپنا دعویٰ پیش کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT