Monday , June 18 2018
Home / ہندوستان / ساری پولیس فورس بھی عصمت ریزی کے واقعات روک نہیں سکتی : عزیز قریشی

ساری پولیس فورس بھی عصمت ریزی کے واقعات روک نہیں سکتی : عزیز قریشی

لکھنؤ ۔ 21 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) گورنر اترپردیش عزیز قریشی نے آج ایک متنازعہ تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ساری پولیس فورس کو خواتین کے تحفظ کیلئے تعینات کردیا جائے تب بھی عصمت ریزی کے واقعات کو روکا نہیں جاسکتا۔ انہوں نے کہا کہ صرف مذہبی خوف ہی اس طرح کے جرائم کو روکنے میں معاون ثابت ہوگا۔ انہوں نے یہ بیان ایسے وقت دیا جبکہ سماج وادی پارٹی سربراہ ملائم سنگھ یادو نے اس سے پہلے کہا تھا کہ اترپردیش میں 21 کروڑ کی آبادی ہے اور اس نوعیت کے واقعات ریاست میں بہت کم ہورہے ہیں۔ گورنر عزیز قریشی نے ایک ٹی وی چینل سے کہا کہ ساری پولیس فورس کو تعینات کرنے کے باوجود عصمت ریزی کے واقعات روکے نہیں جاسکتے۔ انہوں نے کہا کہ ایسے جرائم کے خلاف ماحول تیار کیا جانا چاہئے۔ اس کے علاوہ عوامی بیداری کے ساتھ ساتھ مجرمین کو خوف ہونا چاہئے۔ بعدازاں انہوں نے اپنے ریمارکس کے بارے میں وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اسے غلط انداز میں پیش کیا گیا ہے۔ انہوں نے یہ کہا تھا کہ خواتین کے خلاف جرائم کی روک تھام کیلئے سماج کی ذہنیت کو بدلنے اور ساتھ ہی ساتھ مجرمین کے خلاف سخت کارروائی کی ضرورت ہے ورنہ ساری پولیس فورس مل کر بھی عصمت ریزی کے واقعات کو روک نہیں سکتی۔
بدایوں عصمت ریزی : متاثرین کے ملبوسات کا ڈی این اے
نئی دہلی ۔ 21 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) بدایوں عصمت ریزی کا شکار متاثرین کی نعشوں کے دوبارہ پوسٹ مارٹم میں ناکامی کے بعد سی بی آئی نے ان خواتین کی نجی استعمال کی اشیاء اور دیگر نمونے ڈی این اے تجزیہ کیلئے حیدرآباد میں واقع لیبارٹری کو روانہ کیا ہے۔ سی بی آئی ذرائع نے بتایا کہ ان متاثرین کے ملبوسات اور دیگر استعمال کی اشیاء ان کے ارکان خاندان سے حاصل کرلی گئی ہیں۔ امکان ہیکہ اندرون ایک ہفتہ سی بی آئی کو رپورٹ موصول ہوگی۔ قبروں کو کھود کر تازہ آٹوپسی میں ناکامی کے بعد میڈیکل بورڈ کو ڈی این اے تجزیہ پر انحصار کرنا پڑ رہا ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ فارنسک ماہرین نے ارکان خاندان سے مل کر تجزیہ کیلئے درکار ملبوسات اور دیگر اشیاء حاصل کرلی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT