Saturday , November 18 2017
Home / کھیل کی خبریں / سال بھر کے 9 کروڑ روپے اور کارکردگی صفر : رمیز راجہ

سال بھر کے 9 کروڑ روپے اور کارکردگی صفر : رمیز راجہ

کراچی ، 6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) پاکستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان رمیز راجہ کا کہنا ہے کہ ایشیا کپ اور ورلڈ ٹی 20 میں انتہائی مایوس کن کارکردگی کے بعد کرکٹروں ہی کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کی ضرورت تھی کیونکہ انھی کی وجہ سے پورے سسٹم پر دباؤ پڑا ہے۔ رمیز راجہ نے بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں کہا کہ کرکٹ بورڈ میں اتنا حوصلہ ہونا چاہیے کہ دو تین کرکٹروں کو سسٹم کی بہتری کیلئے باہر کر دے تاکہ دوسروں کیلئے مثال قائم ہو سکے اور آئندہ ایسی حرکتیں نہ ہوں جس سے ملک کا نام بدنام ہو۔ رمیز راجہ کو اس بات پر سخت حیرانی ہے کہ ایک سینئر کرکٹر سال میں کرکٹ بورڈ سے نو کروڑ روپے کماتا ہے اور اگر پانچ چھ کرکٹر نو نو کروڑ روپے لے رہے ہیں اس کے باوجود پاکستانی ٹیم عالمی ٹی 20 رینکنگ میں ساتویں نمبر پر ہے۔ ’تو اس کا مطلب صاف ہے کہ یہ کرکٹر اس پیسے کے اہل ہی نہیں ہیں اور اگر اہل نہیں ہیں تو انھیں تبدیل کر دینا چاہیے۔‘ رمیز راجہ کا کہنا ہے کہ سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ سینئر کرکٹروں کی جگہ لینے والے نوجوان کھلاڑیوں کی کھیپ اس معیار کی نہیں ہے جو انٹرنیشنل کرکٹ کیلئے ضروری ہے، جس کا نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ ہم خراب کارکردگی کے باوجود یرغمال بن جاتے ہیں اور بلیک میل ہوجاتے ہیں اور ہم سینئر کرکٹروں پر ہاتھ نہیں ڈالتے کیونکہ اگر انھیں ڈراپ کر دیا جائے اور ان کی جگہ لینے والے کرکٹر پرفارمنس نہ دیں تو شور مچ جاتا ہے۔‘ رمیز راجہ کے خیال میں پہلے کرکٹروں کا احتساب ضروری تھا، کوچ اور سلیکشن کمیٹی کی تبدیلی تو کسی بھی وقت ممکن تھی۔ رمیزراجہ نے پاکستان کرکٹ بورڈ کو مشورہ دیا ہے کہ سرفراز احمد کو تینوں فارمیٹس کا کپتان بنادیا جائے۔اس کی وجہ وہ یہ بتاتے ہیں کہ مصباح الحق انگلینڈ کے دورے سے قبل اپنی فارم دیکھنا چاہتے ہیں اور وہ تذبذب کا شکار ہیں، اس سے بے یقینی پیدا ہوتی ہے کہ وہ کھیلیں گے یا نہیں، لہٰذا پاکستان کرکٹ بورڈ کو ابھی سے واضح فیصلہ کر لینا چاہیے۔ رمیز راجہ کا کہنا ہے کہ محدود اووروں کی کرکٹ میں سرفراز احمد نیچرل کپتان ہیں لیکن انھیں یقین ہے کہ وہ ٹسٹ کرکٹ میں بھی قیادت کے رموز بہت جلد سیکھ لیں گے۔
(بہ شکریہ : بی بی سی اُردو ڈاٹ کام)

TOPPOPULARRECENT