ساکشی مہاراج کو اسلام قبول کرنے کا مشورہ

یوگا کے لئے زبردستی مجبور کرنا قانونی جرم: محمد فاروق حسین

یوگا کے لئے زبردستی مجبور کرنا قانونی جرم: محمد فاروق حسین
حیدرآباد /16 جون (سیاست نیوز) کانگریس کے رکن قانون ساز کونسل محمد فاروق حسین نے حقیقی مسلمان ہونے کا دعویٰ کرنے والے بی جے پی رکن پارلیمنٹ ساکشی مہاراج کو اسلام قبول کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ مسلمانوں کے لئے نماز ہی یوگا ہے۔ انھوں نے کہا کہ مسلمانوں کو زبردستی یوگا کے لئے مجبور کرنا جمہوری اور قانونی جرم ہے، جب کہ اسلام میں سوریہ نمسکار حرام ہے۔ انھوں نے کہا کہ مسلمان خدا کی ذات میں کسی اور کی مداخلت ہرگز برداشت نہیں کرتے، اس کے باوجود مسلمانوں کے خلاف زہر اگل کر سستی شہرت حاصل کرنے والے ساکشی مہاراج غیر ضروری تنازعہ پیدا کر رہے ہیں۔ انھوں نے بی جے پی رکن پارلیمنٹ کو مشورہ دیا کہ اگر وہ سچے مسلمان ہونے کا دعویٰ کر رہے ہیں تو کلمہ پڑھ کر اپنے قبول اسلام کا اعلان، اپنی ماضی کی غلطیوں کا اعتراف اور مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے پر معذرت خواہی کریں۔ انھوں نے کہا کہ دن میں پانچ وقت نماز کی ادائیگی مسلمانوں کے لئے یوگا سے بہتر اور برتر ہے، لہذا یوگا کے لئے مسلمانوں کو مجبور کرنا مناسب نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ مرکز میں بی جے پی زیر قیادت این ڈی اے حکومت کی تشکیل کے بعد مختلف طریقوں سے مسلمانوں کو ہراساں کیا جا رہا ہے، لیکن بی جے پی کے ان حربوں سے مسلمان گھبرانے والے نہیں ہیں، بلکہ اس قسم کے حربوں سے مسلمانوں کا ایمان مزید پختہ اور ان میں اتحاد پیدا ہوگا۔ انھوں نے کہا کہ مسلمانوں کے مذہبی معاملات میں بی جے پی کو مداخلت کا قانونی یا اخلاقی حق نہیں ہے اور نہ ہی مسلمانوں کی خاموشی کو ان کی کمزوری سمجھنا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT