Thursday , November 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / سدی پیٹ میں طالبہ کی مشتبہ موت

سدی پیٹ میں طالبہ کی مشتبہ موت

زنا بالجبر اور قتل کا شبہ ، لڑکی کے رشتہ داروں کا طلباء کا احتجاج
سدی پیٹ ./26 مئی ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) سدی پیٹ میں ایک 18 سالہ بے سہارا گریجویٹ طالبہ کی مشتبہ موت کا واقعہ منظر پر آیا ۔ رشتہ دار اور گاؤں والوں کے بموجب موضع سرسین گنڈلہ کونڈا پاک منڈل سے تعلق رکھنے والی 19 سالہ سنتوشی اور اس کی بہن رینوکا جن کے ماں باپ دس سال قبل ہی فوت ہوگئے ۔ سدی پیٹ سے تعلق رکھے والے پدماوتی اس کا شوہر روی شنکر شرما سرسینگنڈلہ موضع کے اسکول میں پڑھاتے ہیں ان لڑکیوں پر رحم کھاکر ان کے گھر میں سہارا دیا ۔ پدماوتی ٹیچر کا کہنا ہے کہ ان کی اولاد میں لڑکیاں نہ ہونے پر ان غریب یتیم لڑکیوں پر ترس آکر انہیں گھر میں رکھ لیا جبکہ سنتوشی سدی پیٹ میں ڈگری سال دوم پڑھ رہی تھی ۔ کل رات منگل کو فوت ہوگئی ۔ سن اسٹورک سے فوت ہونے کا بہانہ بناکر پدماوتی نے سنتوشی کی نعش کو اس کے رشتہ داروں کے حوالے کیا جو موضع سرسینگنڈلہ میں رہتے ہیں ۔ اس لڑکی کے جسم پر زخموں کے نشانات دیکھ کر لڑکی کی نعش کو بدوماتی روی شنکر کے سدی پیٹ میں واقع گھر کے سامنے رشتہ داروں نے احتجاج شروع کردیا ۔ بتایا گیا ہے کہ پدماوتی کا چھوٹا لڑکا سنتوشی کے ساتھ زنا بالجبر کے بعد موت کے گھاٹ اتار دیا اور سدی پیٹ سے راہ فرار اختیار کرلیا اور اس واقعہ کو چھپانے کیلئے پدماوتی اس کے شوہر نے سنتوشی کی نعش کو اس کے گاؤں میں موجود رشتہ داروں کو حوالے کیا اور سن اسٹروک سے موت کا بہانہ بنایا ۔ لڑکی کے رشتہ دار اور ساتھ تعلیم حاصل کر رہے طلبہ نے خاطیوں کو فوراً گرفتار کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے تین گھنٹے تک احتجاج کر رہے تھے ۔ پولیس کو اطلاع پر ون ٹاون سرکل انسپکٹر نندیشور کی نگرانی میں موقع واردات پہونچکر احتجاجیوں کو احتجاج کو رکوایا اور واقع کی تحقیقات کرنے کا تیقن دیتے ہوئے نعش کو پوسٹ مارٹم کے بعد رشتہ داروں کے  حوالے کیا ۔ اس لڑکی کی بہن رینوکا چند دن سے اپنے دیہات کے ذاتی مکان میں رہ کر سدی پیٹ میں نرسنگ کورس کر رہی ہے ۔ سنتوشی سدی پیٹ گورنمنٹ ڈگری کالج میں بی کام کمپیوٹر سال دوم میں ہے ۔ اس کی اچانک موت سے ساتھی طلباء شدید غم و غصہ سے خاطیوں کو سزا دینے اور اس بے سہارا لڑکیوں سے انصاف کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT