Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / سرحدی تعطل ختم کرنے چین سے بات چیت کیلئے آمادگی

سرحدی تعطل ختم کرنے چین سے بات چیت کیلئے آمادگی

سکم سیکٹر میں کشیدگی کو کم کرنے کیلئے فوج ہٹانے کا مطالبہ : سشماسوراج
نئی دہلی، 20 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان نے آج کہا ہیکہ وہ چین کے ساتھ بات چیت کیلئے تیار ہے اور سب سے پہلے دونوں طرف کی فوج کو پیچھے ہٹنا چاہئے تاکہ سکم سکٹر میں جاری تعطل و کشیدگی کم ہ وسکے۔ ہندوستان نے سرحدی مسائل کی پرامن یکسوئی کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ چین اور ہندوستان کی فوج اس وقت ڈوکالام علاقہ میں ایک دوسرے کے خلاف صف آراء ہوں۔ اس علاقہ پر ہندوستان کی حلیف بھوٹان نے دعویٰ کیا ہے اور ہندوستانی فوج نے چینی فوج کو متنازعہ علاقہ میں سڑک کی تعمیر سے روک دیا تھا۔ چین کا یہ دعویٰ ہیکہ وہ اپنے ہی علاقہ میں سڑک تعمیر کررہا تھا اور اس نے ہندوستانی فوج کے تخلیہ کا مطالبہ کیا۔ آج راجیہ سبھا میں وقفہ سوالات کے دوران وزیرخارجہ سشماسوراج نے کہا کہ چین یکطرفہ طور پر بھوٹان کے ساتھ سہ فریقی مرکز کا موقف بدلنا چاہتا ہے۔ اس سے ہندوستان کی سلامتی کو خطرہ لاحق ہے۔ وزیر خارجہ سشما سوراج نے آج کہا کہ چین کے ساتھ سرحدی تنازعہ میں تمام ممالک ہندوستان کے ساتھ ہیں اور دونوں ممالک کے درمیان پنچ شیل معاہدہ آج بھی چل رہا ہے ۔سشما سوراج نے آج راجیہ سبھا میں وقفہ سوالات کے دوران کانگریس کی چھایہ ورما کے ایک سوال کے جواب میں یہ بات کہی۔ انہوں نے بتایا کہ چین بھارت کے ہمسایہ سمندر ساحل کے ممالک میں بندرگاہ اور ٹرانسپورٹ خدمات کے لئے بنیادی ڈھانچے اور پاکستان کے ساتھ اقتصادی کوریڈور بھی تیار کر رہا ہے ۔ اس کے علاوہ وہ ون بیلٹ ون روڈ کا پروجیکٹ بھی بنا رہا ہے ۔ چین کی ان سرگرمیوں کو دیکھ کر ہندوستان مکمل طور الرٹ اور چوکنا ہے اور ہمیں کوئی گھیر نہیں سکتا ہے۔ انہوں نے ان الزامات کی تردید کی کہ چین کی ناپاک سرگرمیوں کی خبر ملنے پر ہندوستان نے اپنا احتجاج نہیں جتایا۔ سشما سوراج نے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ ہم نے اسی وقت اپنا احتجاج ظاہر کیا تھا اور دوست ممالک کو بھی اس بارے میں بتایا تھا۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ ابھی ہند-چین سرحد طے ہونا باقی ہے اور چین-بھوٹان سر حد بھی طے ہونی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہند-چین تنازعہ کی اصل وجہ ہے کہ چین نے ہند -چین اور بھوٹان کی مشترکہ سرحد ڈوکلام کے پاس اپنی فوج کردیا ہے لہذا ہندوستانی فوج بھی وہاں تعینات کی گئی ہے ۔ہم چین کو وہاں سے ا پنی فوج ہٹانے کا مطالبہ کر رہے ہیں اگر چین اپنی فوج ہٹا لے تو ہم بھی اپنی فوج ہٹانے کے قائل ہیں۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ ہندوستان نے اس بارے میں اپنا جو موقف رکھا ہے وہ غلط نہیں ہے اور سارے ممالک نے ہماری حمایت کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان جس معاہدے پر دستخط ہوئے تھے وہ آج بھی چل رہا ہے ۔وزار ت خارجہ کے ترجمان گوپال باگلے نے ایک علحدہ بیان میں کہا کہ سرحدی مسئلہ پر ہندوستان کی حکومت بھوٹان سے بات چیت جاری ہے۔

TOPPOPULARRECENT