Wednesday , December 13 2017
Home / جرائم و حادثات / سرقہ کے الزام میں گرفتار شخص کی پولیس تحویل میں خودکشی

سرقہ کے الزام میں گرفتار شخص کی پولیس تحویل میں خودکشی

مسروقہ مال کی تحقیقات کے دوران ملزم کی عمارت سے چھلانگ ، پولیس کی کارکردگی پر سوالیہ نشان
حیدرآباد /3 مئی ( سیاست نیوز ) عوام سے قریب ہونے اور بہترین تعلقات پر زور کے باوجود پولیس کے اقدامات پولیس کو عوام سے دور کرنے کا سبب بن رہے ہیں ۔ خوشگوار ماحول کی تشکیل کیلئے پولیس کو معیاری سہولیات و جدید آلات کی فراہمی کے باوجود پولیس کی مبینہ کارروائیاں حکومت کے منصوبہ کی ناکامی کا سبب بن رہی ہیں ۔ ایک ایسا ہی واقعہ شہر کے نواحی علاقہ میں پیش آیا ۔ جہاں گھٹکیسر پولیس کی تحویل میں ایک شخص فوت ہوگیا جس پر سرقہ کے الزامات تھے ۔ بتایا جاتا ہے کہ نظام آباد سے تعلق رکھنے والے شخص چرنجیوی سے پولیس مسروقہ اشیاء کو حاصل کرنے گئی تھی ۔ تاہم اس نے پولیس کی کارروائی سے بچاؤ کیلئے عمارت سے چھلانگ لگادی ۔ پولیس ذرائع نے یہ بات بتائی ۔ باوثوق ذرائع کے مطابق چرنجیوی شہر کی ایک کمپنی میں خانگی ملازمت کرتا تھا ۔ 24 اپریل گذشتہ ماہ گھٹکیسر پولیس میں ایک شکایت درج ہوئی ۔ پولیس کی ابتدائی تحقیقات میں چرنجیوی پر شبہ ظاہر کیا گیا ۔ پولیس نے متوفی شخص کو قصوروار تسلیم کیا تاہم ابھی اس کے قبضہ سے مسروقہ اشیاء کو ضبط کرنا باقی تھا ۔ پولیس گھٹکیسر نے اس شخص سے پوچھ تاچھ کی اور جیسے ہی نظام آباد مسروقہ سامان کو ضبط کرنے کیلئے پولیس پہونچی تو پولیس کارروائی اور تکالیف سے بچنے کی خاطر اس شخص نے عمارت کی 5 ویں منزل سے چھلانگ لگادی اور شدید زخمی ہوگیا ۔ گھٹکیسر پولیس نے گذشتہ چند روز سے اس بات کو راز میں رکھنے کی بھرپور کوشش کی جو ناکام رہی اور بلاخر تاخیر سے واقعہ منظر عام پر آگیا ۔ تاہم پولیس کے کسی اعلی عہدیداروں نے اس مسئلہ پر بات کرنے سے گریز کیا ۔ یاد رہے کہ سابق میں حالیہ دنوں گھٹکیسر پولیس کی تحویل سے سارق بھی فرار ہوگئے تھے اور اب ایک سارق فوت ہوگیا ۔ پولیس کو چاہئے کہ وہ بہترین کارکردگی کیلئے بہتر انداز میں خدمات انجام دے ۔

TOPPOPULARRECENT