Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / سرکاری اراضیات پر قبضہ کو باقاعدہ بنانے کی اسکیم کا لینڈ گرابرس کو فائدہ

سرکاری اراضیات پر قبضہ کو باقاعدہ بنانے کی اسکیم کا لینڈ گرابرس کو فائدہ

حیدرآباد ۔ 16 ۔ فروری : ( محمد عبدالرشید سلفی ) : حکومت تلنگانہ کی جانب سے ریاست تلنگانہ میں واقع سرکاری اراضیات پر قابض ناجائز قابضین کی اراضیات کو مستقل اور باقاعدہ بنانے سے متعلق جاری کردہ جی او نمبرات 58 اور 59 کے تحت ساری ریاست میں غیر قانونی تعمیرات اور غیر قانونی اراضیات کو مستقل اور باقاعدہ بنانے کا عمل جاری ہے لیکن حکومت تلنگانہ کی جانب سے جاری کردہ مذکورہ جی او نمبرات کی اجرائی کی آڑ میں کہیں ناجائز قابضین بجائے سرکاری اراضیات کے ریاست تلنگانہ میں واقع کروڑوں روپئے مالیتی قیمتی اراضیات پر ناجائز قبضہ کرتے ہوئے اراضیات کو مستقل اور باقاعدہ بنا تو نہیں رہے ہیں ۔ حکومت تلنگانہ کی جانب سے جاری کردہ جی اوز کی اجرائی کے پس منظر میں اس بات کا قوی امکان ہے کہ مذکورہ جی او کی اجرائی کا ناجائز فائدہ اٹھاتے ہوئے با اثر سیاسی قائدین اور لینڈ گرابرس کی جانب سے نہ صرف سرکاری اراضیات بلکہ قیمتی اوقافی اراضیات پر بھی قبضہ کرتے ہوئے ناجائز قبضہ کی جانے والی اراضیات کو مستقل اور باقاعدہ بنانے کا خطرہ لاحق ہوگیا ہے ۔ حکومت تلنگانہ پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ جی او 58 اور 59 کے تحت اراضیات کو مستقل اور باقاعدہ بنانے کے دوران اوقافی اراضیات کی نشاندہی کرتے ہوئے اگر وقف اراضی ہو تو اسے مستقل اور باقاعدہ نہ بنانے سے متعلق محکمہ رجسٹریشن کے عہدیداروں کو ہدایات جاری کرے تاکہ ریاست تلنگانہ میں واقع اوقافی اراضیات کے تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے ۔۔

TOPPOPULARRECENT