Tuesday , June 19 2018
Home / ہندوستان / سرکاری اشتہارات کی نمائش کرنے والے سیاستدانوں کیلئے سپریم کورٹ کی رہنمایانہ خطوط کمیٹی کا قیام

سرکاری اشتہارات کی نمائش کرنے والے سیاستدانوں کیلئے سپریم کورٹ کی رہنمایانہ خطوط کمیٹی کا قیام

نئی دہلی 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج ایک کمیٹی تشکیل دی تاکہ عوامی فنڈس کے استحصال کو روکنے کے لئے رہنمایانہ خطوط قائم کئے جائیں۔ حکومت اور سرکاری عہدیداروں کو اخبارات اور ٹی وی کو ایسے اشتہارات نہ دینے کی ہدایت دی گئی ہے جن سے سیاسی فوائد حاصل ہوسکیں۔ چیف جسٹس پی ستاسیوم کی زیرقیادت قائم بنچ نے کہاکہ ٹھوس رہنمایانہ خط

نئی دہلی 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے آج ایک کمیٹی تشکیل دی تاکہ عوامی فنڈس کے استحصال کو روکنے کے لئے رہنمایانہ خطوط قائم کئے جائیں۔ حکومت اور سرکاری عہدیداروں کو اخبارات اور ٹی وی کو ایسے اشتہارات نہ دینے کی ہدایت دی گئی ہے جن سے سیاسی فوائد حاصل ہوسکیں۔ چیف جسٹس پی ستاسیوم کی زیرقیادت قائم بنچ نے کہاکہ ٹھوس رہنمایانہ خطوط کی ضرورت ہے تاکہ سرکاری خزانے کی رقم پر ایسے اشتہارات پر نگرانی رکھی جائے۔ ایک 4 رکنی کمیٹی قائم کی گئی ہے جس میں سابق ڈائرکٹر قومی عدالتی اکیڈیمی بھوپال این آر مادھو مینن، سابق معتمد لوک سبھا پی کے وشواناتھن، سینئر ایڈوکیٹ رنجیت کمار اور معتمد وزارت اطلاعات و نشریات شامل ہوں گے۔ سپریم کورٹ نے کمیٹی سے خواہش کی کہ اپنی رپورٹ اندرون 3 ماہ داخل کردے۔ عدالت نے ایک درخواست مفاد عامہ پر جو ایک این جی او کامن کاز اینڈ سنٹر فار پبلک انٹرسٹ لیٹی گیشن کی درخواست پر یہ احکام جاری کئے۔ درخواست میں رہنمایانہ خطوط کے تعین کی گزارش کی گئی ہے تاکہ برسر اقتدار پارٹیوں کو سرکاری اشتہارات میں اپنے قائدین کو اُبھار کر سیاسی فوائد حاصل کرنے سے روکا جاسکے۔ این جی او کی جانب سے دو وکلاء نے پیروی نے کی۔ اُنھوںنے کہاکہ برسر اقتدار پارٹی سے تعلق رکھنے والے سیاست دانوں کی تشہیر تاکہ عوامی فنڈس کے استعمال کے ذریعہ سیاسی فوائد حاصل کئے جاسکیں، دستور کی خلاف ورزی ہے۔

TOPPOPULARRECENT