Wednesday , December 13 2017
Home / شہر کی خبریں / سرکاری خزانہ کے نقصانات اور عوامی مسائل پر وزیراعظم سے نمائندگی

سرکاری خزانہ کے نقصانات اور عوامی مسائل پر وزیراعظم سے نمائندگی

چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کو عوامی بھلائی کی فکر ، محمد محمود علی ڈپٹی چیف منسٹر کا ادعا
حیدرآباد۔25 نومبر (سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے کہا کہ کرنسی نوٹوں کی تنسیخ سے عوام کو پیش آنے والے مسائل سے وزیراعظم کو واقف کرایا گیا ہے۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے اپنے حالیہ دورہ دہلی کے موقع پر وزیراعظم سے ملاقات کی اور انہیں عوامی مسائل اور مشکلات سے آگاہ کیا۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے محمود علی نے کہا کہ چیف منسٹر نے وزیراعظم سے اس بات کی خواہش کی کہ عوام کو آسانی سے کرنسی فراہم کرنے کے لئے بینکوں اور اے ٹی ایم سنٹرس پر مناسب مقدار میں نئی کرنسی سربراہ کی جائے۔ چیف منسٹر نے وزیراعظم کو کرنسی کی تنسیخ سے ریاستی خزانے پر پڑنے والے اثرات اور نقصانات سے بھی آگاہ کیا۔ چیف منسٹر نے خواہش کی کہ اس فیصلے سے ریاستی خزانے کو جو نقصان ہورہا ہے اس کی پابجائی مرکز کی جانب سے کی جانی چاہئے۔ محمود علی نے کہا کہ چھوٹے کرنسی نوٹ کی بآسانی دستیابی کی صورت میں عوامی مشکلات بڑی حد تک دور ہوسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو ترقی اور فلاح و بہبود کے معاملے میں ملک کی دیگر ریاستوں میں سرفہرست ہیں۔ انہیں ملک کے نمبر 1 چیف منسٹر کا اعزاز حاصل ہوا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ترقی اور بھلائی کے معاملہ میں تلنگانہ حکومت نے جو اقدامات کئے ہیں ان سے دیگر ریاستیں متاثر ہوکر اسکیمات کی تفصیلات حاصل کررہی ہیں۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ مرکزی وزراء خود بھی تلنگانہ میں بھلائی اسکیمات کے معترف ہیں۔ محمد محمود علی نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو ہمیشہ غریبوں کی بھلائی کے بارے میں فکرمند رہے ہیں اور وہ ہر شہری کے چہرے پر خوشی دیکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی منشور میں جو وعدے کئے گئے تھے ان پر عمل آوری کی جارہی ہے۔ صنعتی شعبہ کو روزانہ 20 گھنٹے برقی سربراہ کی جارہی ہے اور زرعی شعبہ کو 9 گھنٹے سربراہی کے وعدے پر عمل کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مشن بھگیرتا کے تحت 80 لاکھ مکانات کو پینے کے پانی کے کنکشن فراہم کئے جارہے ہیں۔ محمود علی نے ریاست میں نئے اضلاع کی تشکیل کے فیصلے کو حق بجانب قرار دیا اور کہا کہ بہتر نظر و نسق اور اسکیمات پر موثر عمل آوری کیلئے یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام اس فیصلے سے کافی خوش ہیں۔ محمود علی نے اپوزیشن جماعتوں کی تنقیدوں اور اعتراضات کو مسترد کردیا اور کہا کہ دراصل اپوزیشن جماعتیں عوامی تائید سے محرومی کے باعث بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT