Thursday , September 20 2018
Home / شہر کی خبریں / سرکاری دفاتر میں اردو آفیسرس کے تقررات کے لیے اقدامات

سرکاری دفاتر میں اردو آفیسرس کے تقررات کے لیے اقدامات

اردو اکیڈیمی کے ماہرین سے مشاورت ، امتحان کے انعقاد کے طریقہ کار پر غور
حیدرآباد ۔12۔ ڈسمبر (سیاست نیوز) محکمہ اقلیتی بہبود نے 66 اردو آفیسرس کی جائیدادوں پر تقررات کے سلسلہ میں محکمہ قانون کی منظوری کے بعد مزید پیشرفت ہوئی ہے اور اب جی اے ڈی اور چیف سکریٹری کی منظوری باقی ہے۔ توقع ہے کہ اندرون ایک ہفتہ تمام درکار منظوریاں حاصل ہوجائیں گی جس کے بعد قطعی دستخط چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی ہوگی۔ باوثوق ذرائع نے بتایا کہ اہم سرکاری دفاتر میں اردو آفیسرس کے تقررات کے سلسلہ میں اردو اکیڈیمی ماہرین سے مشاورت کے ذریعہ امتحان کے انعقاد کے طریقہ کار کو طئے کرے گی۔ اس سلسلہ میں پبلک سرویس کمیشن اور مختلف رکروٹمنٹ بورڈس سے رائے حاصل کی گئی ہے۔ چیف منسٹر نے تقررات کے سلسلہ میں اردو اکیڈیمی کو نوڈل ایجنسی مقرر کیا ہے اور امتحانات کا انعقاد اکیڈیمی کی ذمہ داری ہے۔ چیف منسٹر کی جانب سے فائل کی منظوری کے ساتھ ہی تقررات کا عمل شروع ہوجائے گا۔ کے سی آر نے 60 دنوں میں تقررات مکمل کرنے کی ہدایت دی ہے، اس میں سے ایک ماہ مکمل ہوچکا ہے۔ عہدیداروں کا کہنا ہے کہ مقررہ مدت کے دوران کسی بھی صورت میں 66 جائیدادوں کو پر کردیا جائے گا۔ یہ پہلا موقع ہے جب محکمہ اقلیتی بہبود میں اردو آفیسرس کی جائیدادوں کو منظوری دی گئی۔ محکمہ فینانس کی منظوری کے بعد فائل کی رفتار میں تیزی آچکی ہے۔ چیف منسٹر کے منصوبہ کے مطابق ان کے دفتر میں دو اردو آفیسرس رہیں گے۔ جن کا کام اردو میں موصول ہونے والی درخواستوں کا ترجمہ انگریزی یا تلگو میں کرتے ہوئے چیف منسٹر کے دفتر کو پہنچانا ہوگا۔ اسپیکر اسمبلی، صدرنشین قانون ساز کونسل، تمام ریاستی وزراء اور تمام ضلع کلکٹرس کے دفاتر میں بھی اردو آفیسرس کا تقرر کیا جائے گا۔ تقرر کا یہ عمل دیگر سرکاری جائیدادوںکی طرح ہوگا اور منتخب افراد کیلئے مستقبل میں محکمہ جاتی ترقی اور دیگر سرکاری فوائد حاصل ہوں گے ۔ بتایا جاتا ہے کہ اسسٹنٹ ڈائرکٹر رتبہ کے 6 پوسٹ رہیں گے جبکہ باقی سپرنٹنڈنٹ رتبہ کے ہوں گے ۔ چیف منسٹر کے دفتر کی جانب سے تقررات کی پیشرفت کے بارے میں معلومات حاصل کی جارہی ہے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل اس فائل کی عاجلانہ منظوری اور امتحانات کے انعقاد کے سلسلہ میں سرگرم ہیں۔ حکومت نے تلنگانہ میں اردو کو دوسری سرکاری زبان کا موقف عطا کیا ہے ، ایسے میں 66 اردو آفیسرس کے تقرر سے اردو داں طبقہ میں مسرت کی لہر پائی جاتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT