Thursday , June 21 2018
Home / شہر کی خبریں / سرکاری دواخانوں میں صد فیصد زچگی کرانے عہدیداروں کو ہدایت

سرکاری دواخانوں میں صد فیصد زچگی کرانے عہدیداروں کو ہدایت

کلکٹر حیدرآباد یوگیتا رانا کا محکمہ میڈیکل اینڈ ہیلت کے عہدیداروں کے ساتھ اجلاس
حیدرآباد ۔ 11 ۔ جنوری : ( سیاست نیوز) : کلکٹر حیدرآباد یوگیتا رانا نے سرکاری ہاسپٹلس میں صد فیصد زچگی کرانے کو یقینی بنانے اور عوام میں شعور بیدار کرنے کے لیے ٹیم ورک کی طرح کام کرنے کا میڈیکل اینڈ ہیلت کے عہدیداروں کو مشورہ دیا ۔ طبی خدمات میں غفلت سے کام کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا انتباہ دیا۔ کلکٹر حیدرآباد کے طلب کردہ اجلاس میں ایڈیشنل ڈی ایم اینڈ ایچ او ڈاکٹر سرلہ ، ڈی سی ایچ ایس ڈاکٹر سجاتا کے علاوہ دوسرے عہدیداروں نے شرکت کی ۔ اس اجلاس میں سرکاری ہاسپٹلس میں زچگی کرانے کی تعداد میں اضافہ کرنے کا جائزہ لیا گیا ۔ یوگیتا رانا نے کہا کہ حیدرآباد کے تمام ایس پی ایچ او کے حدود میں واقع پی ایچ سیز میں زچگی کرانے کی تعداد کم ہے ۔ ان ہاسپٹلس میں شرح زچگی میں اضافہ کرنے کے لیے ضروری اقدامات کرنے کی میڈیکل آفیسرس کو ہدایت دی ۔ کلکٹر حیدرآباد نے میڈیکل ٹیم کو مشورہ دیا کہ وہ عوام کی زیادہ تر تعداد خانگی ہاسپٹلس کا رخ کیوں کررہی ہیں ۔ اس کا جائزہ لیں اور سرکاری ہاسپٹلس میں بھی خانگی ہاسپٹلس کے طرز پر خدمات انجام دینے کے لیے حکمت عملی تیار کریں ۔ عہدیداروں نے بتایا کہ نیلوفر ہاسپٹل ، کنگ کوٹھی ہاسپٹل ، گاندھی اور عثمانیہ ہاسپٹلس میں تمام سہولتیں موجود ہیں ۔ جس کی وجہ سے عوام ان ہاسپٹلس سے رجوع ہورہے ہیں ۔ جب کہ ایریا ہاسپٹلس اور پی ایچ سیز میں آپریشن تھیٹرس ، آلات ، عملہ اور دوسری بنیادی سہولتیں نہ ہونے کی وجہ سے زچگی کرانے کی تعداد گھٹ جانے کی وجوہات سے کلکٹر حیدرآباد کو واقف کرایا ۔ کلکٹر حیدرآباد نے میڈیکل آفیسرس کو اے این ایم اور آشا ورکرس کی تائید حاصل کرتے ہوئے عوام میں شعور بیدار کرانے اور ساتھ ہی حاملہ خواتین کے چک اپ کو بھی یقینی بنانے پر زور دیا ۔ یوگیتا رانا نے کہا کہ سرکاری ہاسپٹلس میں خانگی ہاسپٹلس کی طرز پر خدمات فراہم کی جائے ۔ زیادہ خطرات والے کیسیس کو فوری ایریا یا دوسرے ہاسپٹلس کو منتقل کرنے کی ہدایت دی ۔ طبی جانچ کے لیے ہاسپٹلس نہ پہونچنے والی حاملہ خواتین کی فہرست تیار کرتے ہوئے میڈیکل آفیسرس کے توسط سے اے این ایم ، آشا ورکرس کو حاملہ خواتین میں شعور بیدار کرنے کی ہدایت دی ۔ کلکٹر حیدرآباد یوگیتا رانا نے کہا کہ پی ایچ سیز میں زچگی کی شرح میں اضافہ کرنے کی ذمہ داری ایس پی ایچ اوپر عائد ہوگی ۔ وہ میڈیکل آفیسرس ، پی ایچ سی ڈاکٹرس ، اے این ایم ، آشا ورکرس اور پیرا میڈیکل اسٹاف کے ساتھ مل کر ٹیم ورک کریں ۔ طبی خدمات میں غفلت سے کام کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کا انتباہ دیا ۔ انہوں نے ایس پی ایچ او کے لیے درکار ضرورتیں اور سہولتوں ، کام کرنے والے عملے کی تفصیلات جنوری تا مارچ کا ٹارگیٹ مقرر کرتے ہوئے تفصیلات روانہ کرنے کی ہدایت دی۔۔

TOPPOPULARRECENT