Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / سرکاری ملازمین، فوجیوں اور سابق فوجیوں کیلئے زونل سسٹم برخاست

سرکاری ملازمین، فوجیوں اور سابق فوجیوں کیلئے زونل سسٹم برخاست

برسرخدمت ملازم کے انتقال پر اندرون دس یوم ملازمت، چیف منسٹر کے سی آر کا فیصلہ
حیدرآباد۔24 ڈسمبر (سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے سرکاری ملازمین، فوجیوں اور سابق فوجیوں کے لئے زونل سسٹم کی برخاستگی سے متعلق اہم فیصلہ کیا ہے۔ نئی ریاست تلنگانہ میں اب سابقہ زونل سسٹم برقرار نہیں رہے گا۔ اس کے علاوہ حکومت نے برسر خدمت ملازمین کے انتقال کی صورت میں خاندان کے کسی رکن کو ملازمت کی فراہمی کا عمل اندرون 10 یوم مکمل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے عہدیداروں اور ملازمین کی تنظیموں کے ساتھ جائزہ اجلاس میں کئی اہم فیصلے کئے۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے اجلاس کو بتایا کہ اب ریاست میں زونل سسٹم کی جگہ ریاستی اور ضلع سطح کے کیڈر کا شمار کیا جائے گا۔ اس کے لئے سرویس رولس میں ضروری ترمیمات کی ہدایت دی گئی ہے۔ چیف منسٹر نے ملازمین کی تنظیموں اور عہدیداروں کو تجاویز پیش کرنے کی ہدایت دی۔ فوجیوں اور شہید فوجیوں کے ارکان خاندان کی بھلائی اور سابق فوجیوں کی بہبود کے سلسلہ میں بھی اجلاس میں غور کیا گیا۔ ایسے ملازمین جن کی برسر خدمت موت واقع ہوئی ہے، ان کے ارکان خاندان میں سے کسی ایک شخص کو ملازمت کی فراہمی کے قواعد میں نرمی پیدا کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ چیف منسٹر نے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ وہ اندرون 10 یوم ان معاملات کی یکسوئی کریں۔ عام طور پر اس طرح کی کارروائیوں کے لئے عوام کو کئی ماہ تک سرکاری دفاتر کے چکر کاٹنے پڑرہے تھے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ وظیفہ پر سبکدوش ہونے والے ملازمین کو سبکدوشی کے دن ہی پنشن بنیفٹ مکمل طور پر ادا کردیئے جائیں۔ سبکدوش ملازمین کو سرکاری اعزاز کے ساتھ سرکاری گاڑی میں ان کی قیام گاہ تک وداع کیا جائے۔ چیف منسٹر نے ان شرائط پر سختی سے عمل آوری کی ہدایت دی۔ انہوں نے کہا کہ تین چار دہوں تک حکومت کی خدمت کرنے والے ملازمین کا احترام کیا جانا چاہئے۔ چیف منسٹر نے فوج میں خدمات انجام دینے والے افراد اور ملک کے لئے اپنی جان قربان کرنے والے جوانوں کے افراد خاندان کے لئے بھی حکومت کی جانب سے بہبودی اقدامات کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ فوج میں خدمات کی انجام دہی کے بعد ریاستی حکومت نے کام کرنے والے ملازمین کو دوہرا پنشن ادا کیا جائے گا۔ سابق میں ایسے ملازمین کے لئے صرف ایک پنشن کی گنجائش تھی۔ حکومت نے فوجی جوانوں کی جانب سے مکانات کے ٹیکس معاف کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ حیدرآباد میں سرکاری دفاتر اور سرکاری رہائش گاہوں کے الاٹمنٹ اور اس کے استعمال کے سلسلہ میں آندھراپردیش حکومت سے مشاورت کے لئے تین رکنی کمیٹی تشکیل دی جائے گی۔ اس کمیٹی میں حکومت کے مشیر جی ویویکانند اور ریاستی وزراء ہریش راء اور جگدیش ریڈی شامل ہوں گے۔ آندھراپردیش حکومت بھی مذاکرات کے لئے تین نمائندوں کا اعلان کرے گی۔ دونوں ریاستوں کے نمائندے اس مسئلہ پر ریاستی گورنر ای ایس ایل نرسمہن سے مشاورت کریں گے۔ واضح رہے کہ حیدرآباد میں آندھراپردیش حکومت کے لئے جو دفاتر اور رہائش گاہیں الاٹ کی گئی تھیں ان کے حصول کے لئے تلنگانہ حکومت مساعی کررہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT