Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / سریش کے لائنز کو آج ڈیوڈ زیرقیادت سن رائزرز کے بولرز کا سامنا

سریش کے لائنز کو آج ڈیوڈ زیرقیادت سن رائزرز کے بولرز کا سامنا

٭  دلچسپ مسابقت متوقع ۔ آئی پی ایل کوالیفائر 2 چاہے کوئی جیتے ، 29 مئی کو نیا چمپئن دریافت ہوگا

نئی دہلی ، 26 مئی (سیاست ڈاٹ کام) گجرات لائنز کو اپنے پہلے سیزن میں ہی اگر خطاب جیتنا ہو تو اُس کے پہلے مرحلے کے طور پر انھیں سن رائزرز حیدرآباد کے خطرناک پیسرز کا چیلنج بہرحال ناکام بنانا پڑے گا جب یہ دونوں ٹیمیں انڈین پریمیر لیگ (آئی پی ایل) کوالیفائر 2 میں کل یہاں مقابلہ کھیلیں گی۔ سریش رائنا زیرقیادت لائنز اپنی پہلی ہی آئی پی ایل شرکت میں متاثرکن رہے ہیں، جیسا کہ وہ پوائنٹس ٹیبل میں ٹاپ پوزیشن پر اختتام کرتے ہوئے پلے آف مرحلے تک پہنچے۔ انھیں خطابی مقابلہ تک لگ بھگ رسائی مل چکی تھی جب وہ فرسٹ کوالیفائر میں رائل چیلنجرز بنگلور کو عملاً چاروں خانے چت کرتے دکھائی دیئے لیکن اے بی ڈی ولیرز نے اقبال عبداللہ کو ساتھ لے کر اپنی سنسنی خیز بیٹنگ اور میچ جتانے والی پارٹنرشپ کے ذریعے حریفوں کے قدم اکھاڑ دیئے۔ مگر اب لائنز کیلئے کام کچھ آسان نہیں کیونکہ انھیں ایسی ٹیم کا سامنا ہے جس نے اُن کو لیگ مرحلے میں دو مرتبہ ہرایا۔ دونوں مرتبہ وہ اپنے اسکورز کا سن رائزرز کے خلاف دفاع کرنے میں ناکام رہے۔ سن رائزرز کی طاقت پُراثر آشیش نہرا کی غیرحاضری میں کسی حد تک کم ہوئی ہے، جو گھٹنے کی سرجری کے بعد سنبھل رہے ہیں، لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ بھونیشور کمار اور بنگلہ دیشی پیسر مستفیض الرحمن نے اپنی بولنگ کے ذریعے سن رائزرز کو مضبوط پوزیشن تک پہنچایا ہے۔ گزشتہ روز منعقدہ ایلمنیٹر میں بھی کپتان ڈیوڈ وارنر نے بھونیشور اور مستفیض کو عمدگی سے استعمال کرتے ہوئے کولکاتا نائٹ رائیڈرز کے بیٹسمنوں پر دباؤ ڈالا اور آخرکار وہ ناکام ہوگئے۔ یہاں فیروز شاہ کوٹلہ کی وکٹ سے پیسرز کو کچھ مدد مل سکتی ہے۔ ویسے اس میدان کی وکٹیں ٹورنمنٹ کے بڑھتے بڑھتے کچھ سست ہوتی گئی ہیں۔ اور جس طرح لائنز کے فاسٹ بولر دھول کلکرنی نے کوالیفائر 1 میں رائل چیلنجرز بنگلور کے خلاف گیندبازی کی، ایسا معلوم ہوتاہے کہ بیٹسمنوں کو دوبارہ مشکلات کا سامنا ہونے والا ہے۔ ان بولروں کے خلاف شروع سے دھواں دھار بیٹنگ کی حکمت عملی شاید کام نہ کرے اور بیٹسمنوں کو کریز پر کچھ وقت گزار کر اپنے ہاتھ کھولنا پڑے گا۔ یہی کچھ یوراج سنگھ نے گزشتہ روز کے کے آر کیخلاف کیا اور اُن کی اننگز نے اس میچ کے نتیجے میں اہم رول ادا کیا۔ ویسے لائنز کی صفوں میں اتنا دم خم اور ایسے معیاری بیٹسمین موجود ہیں جو سن رائزرز کے پیسرز سے مقابلہ کرسکیں اور وہ یہی امید کریں گے کہ برنڈن مک کلم کل کچھ خاص کردکھائیں۔ اس کیوی بیٹسمن کو ٹاپ آرڈر میں جارحانہ مظاہرہ پیش کرتے ہوئے اپنی وکٹ کی قیمت لگانی پڑے گی۔ڈوین اسمتھ اُن کے اہم کھلاڑی رہے ہیں اور شاید وہی ہیں جن کو سن رائزرز جلد آؤٹ کردینا چاہیں گے۔ اسمتھ کے اس ٹورنمنٹ میں اننگز لائنز کیلئے کلیدی ثابت ہوئے ہیں اور انھیں ضرورت ہے کہ ویسٹ انڈین اپنی شاندار بیٹنگ کا سلسلہ جاری رکھیں۔ آرن فنچ ایک اور بیٹسمن ہے جو اپنے بل بوتے پر میچ کا نقشہ بدل سکتا ہے۔ لیکن یہ بلاشبہ سن رائزرز کے پیسرز اور لائنز کے بیٹسمنوں کے درمیان مقابلہ رہے گا۔ بہرحال آنے والے کل جو بھی ٹیم فائنل (29 مئی) میں رسائی حاصل کرلے، اس سیزن نئی ٹیم کو چمپئن کا اعزاز ملنے والا ہے کیونکہ ان تینوں ٹیموں میں سے کوئی بھی اب ٹورنمنٹ میں باقی نہیں، جنھوں نے یہ ٹروفی جیت رکھی ہے۔    (میچ کا آغاز:  8:00 pm)

TOPPOPULARRECENT