Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / سرینگر کی جامع مسجد میں لگاتارپانچویں جمعہ نماز نہ ہوسکی

سرینگر کی جامع مسجد میں لگاتارپانچویں جمعہ نماز نہ ہوسکی

سرینگر27اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام ) کشمیر انتظامیہ نے مسلسل پانچویں جمعہ کو بھی دارالحکومت سرینگرکے بعض حصوں بالخصوص پائین شہر میں سخت ترین پابندیاں نافذ کرکے نوہٹہ میں واقع تاریخی و مرکزی جامع مسجد میں نماز جمعہ کی ادائیگی ناممکن بنادی۔قابل ذکر ہے کہ کشمیری علیحدگی پسند قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ مولوی عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے 27اکٹوبر کو کشمیریوں کے لیے یوم سیاہ اور یوم ماتم قرار دیتے ہوئے اس دن مکمل ہڑتال کرنے کی اپیل کی تھی۔ ان کا کہنا ہے کہ 70سال قبل آج ہی کے دن بھارتی فوج نے بغیر کسی آئینی اور اخلاقی جواز کے جموں کشمیر پر جبری قبضہ جمایا اور جب سے یہ فوج نہتے کشمیریوں کو قتل کررہی، ان کے گھروں کو اُڑا رہی اور ان کے عزتوں کو پامال کررہی ہے ۔تاہم ہڑتال کے دوران احتجاجی مظاہروں کے خدشے کے پیش نظر کشمیر انتظامیہ نے شہر کے 7 پولیس تھانوں خانیار، نوہٹہ، صفا کدل، ایم آر گنج ، رعناواری ، کرال کڈھ اور مائسمہ کے تحت آنے والے علاقوں میں کرفیو جیسی پابندیوں نافذ کردیں جن کی وجہ سے تاریخی جامع مسجد میں نماز کی ادائیگی ناممکن بن گئی۔جامع مسجد میں30ستمبر،6 اکٹوبر، 13 اور 20 اکٹوبر کو بھی بندشوں کے ذریعے نماز کی ادائیگی ناممکن بنادی گئی تھی۔

چاروں موقعوں پر علیحدگی پسند قیادت نے کشمیری خواتین کے بال کاٹنے کے واقعات کے خلاف نماز جمعہ کی ادائیگی کے بعد احتجاجی مظاہروں کی اپیل کی تھی۔ کشمیر انتظامیہ نے ہڑتال کے دوران پرتشدد احتجاجی مظاہروں کے خدشے کے پیش نظر شہر کے سات پولیس تھانوں ایم آر گنج، نوہٹہ، خانیار، صفا کدل، رعناواری، کرال کڈھ اور مائسمہ کے تحت آنے والے علاقوں میں جمعہ کی صبح ہی سخت ترین پابندیاں نافذ کیں۔حریت کانفرنس (عمر) چیرمین میرواعظ مولوی عمر فاروق کو جو ہر جمعہ کو نماز کی ادائیگی سے قبل تاریخی جامع مسجد میں نمازیوں سے خطاب کرتے ہیں، جمعرات کی صبح ہی اپنی رہائش گاہ پر نظربند کردیا گیا۔ پابندیوں کے نفاذ کے طور پر پائین شہر کی بیشتر سڑکوں کو جمعہ کی صبح ہی ناکہ بندی کردی گئی تھی جبکہ ان پر لوگوں کی نقل وحرکت کو روکنے کے لئے بڑی تعداد میں سیکورٹی فورسز اور ریاستی پولیس کے اہلکاروں کی نفری تعینات کی گئی تھی۔نوہٹہ کے مقامی لوگوں نے بتایا کہ تاریخی جامع مسجد کے دروازوں کو جمعہ کی صبح ہی مقفل کردیا گیا تھا۔ نوہٹہ کے ایک رہائشی نے یو این آئی کو فون پر بتایا کہ سیکورٹی فورسز لوگوں کو یہ کہتے ہوئے اپنے گھروں میں ہی رہنے کو کہہ رہے تھے کہ علاقہ میں کرفیو کا نفاذ عمل میں لایا جاچکا ہے ۔مسجد انتظامیہ کمیٹی کے ایک عہدیدار نے یو این آئی کو بتایا کہ ہم نے فجر کی نماز جامع مسجد کے اندر ہی ادا کی۔ لیکن فجر نماز ادا کرنے کے بعد سیکورٹی فورسز نے جامع مسجد کو بند کردیا۔

TOPPOPULARRECENT