Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / سری لنکا میں مسلمانوں پر اکثریتی فرقہ کے حملے

سری لنکا میں مسلمانوں پر اکثریتی فرقہ کے حملے

دو مساجد کو نقصان ، دوبارہ کرفیو نافذ ، فوج تعینات
کولمبو ۔ 18 ۔ نومبر : ( سیاست ڈاٹ کام) : سری لنکا کے جنوبی شہر گیل میں سنہالہ طبقہ کے تشدد پر آمادہ ہجوم نے مسلمانوں کے کئی مکانات اور تجارتی مراکز کو حملہ کا نشانہ بنایا جس کے نتیجہ میں یہاں فرقہ وارانہ تشدد پھوٹ پڑا اور پولیس نے 19 افراد کو گرفتار کرتے ہوئے کرفیو نافذ کردیا ۔ پولیس نے بتایا کہ چھڑپوں میں سات افراد زخمی ہوئے اور کل رات سنگباری کے واقعات میں 2 مساجد ، 34 مکانات ، 13 دکانات اور 11 گاڑیوں کو نقصان پہنچایا گیا ۔ پولیس ترجمان اوانی گنا شیکھر نے بتایا کہ صورتحال پر قابو پالیا گیا اور آج 6 بجے صبح سے دوبارہ کرفیو نافذ کردیا گیا ۔ پولیس نے کل رات گیل میں فرقہ وارانہ جھڑپوں کے بعد کئی علاقوں میں کرفیو نافذ کیا تھا جسے آج صبح 9 بجے برخاست کردیا گیا ۔ اکثریتی سنہالہ طبقہ کے اقلیتی طبقہ کے ساتھ ایک معمولی واقعہ کے بعد مسلمانوں کو نشانہ بناتے ہوئے ان کے مکانات اور دکانات پر حملے کئے گئے ۔ پولیس نے بتایا کہ حالات پر قابو پانے کے لیے پولیس کی اسپیشل ٹاسک فورس اور فوج کو تعینات کیا گیا ہے ۔ ایک سینئیر وزیر نے کہا کہ جمعرات کی شب ایک چھوٹے واقعہ پر قابو پالیا گیا تھا لیکن کل دوسرے گروپ نے صورتحال کو ابتر بنادیا ۔ حکومت نے کہا کہ حالات پر قابو پانے کے لیے تمام مذاہب کے نمائندوں پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی گئی ہے ۔ سری لنکا کی 21 ملین آبادی میں مسلمان 10 فیصد ہیں اور حالیہ عرصہ میں مسلم طبقہ نے حملوں کے واقعات میں اضافہ کی شکایت کی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT