Monday , September 24 2018
Home / کھیل کی خبریں / سری لنکا یا بنگلہ دیش ایشیا کپ کا نیا میزبان

سری لنکا یا بنگلہ دیش ایشیا کپ کا نیا میزبان

 

نئی دہلی۔12 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ہندوستان نے پاکستان کی شرکت کے سبب ایشیا کپ 2018 کی میزبانی سے انکار کر دیا ہے اور بی سی سی آئی نے اس فیصلے سے ایشین کرکٹ کونسل کو بھی آگاہ کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق بی سی سی آئی کی گورننگ باڈی کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ پاکستان کی موجودگی میں ایشیا کپ کی میزبانی نہیں کر سکتے۔ بی سی سی آئی حکام نے اس حوالے سے ایشین کرکٹ کونسل کو بھی آگاہ کر دیا ہے جبکہ بورڈ کے قائم مقام سیکرٹری امیتابھ چوہدری نے کہا ہے کہ آئندہ چار سال تک پاکستان سے دو طرفہ کرکٹ کا کوئی امکان نہیں ہے۔ بی سی سی آئی کی جانب سے ہندوستان ٹیم کے چار سالہ فیوچر ٹور کے تفصیلات میں پاکستان کے ساتھ کوئی بھی سیریز طے نہیں۔میڈیا رپورٹس کے مطابق بی سی سی آئی کی گورننگ باڈی کے اجلاس کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے امیتابھ چوہدری نے کہا کہ اگر ہندوستانی حکومت پاکستان کے ساتھ کرکٹ کھیلنے کی اجازت دیتی ہے تو دو طرفہ کرکٹ کی کوئی صورت حال بن سکتی ہے۔ یاد رہے کہ قیاس آرائیاں پہلے سے زیر گردش تھیں کہ ایشیا کپ میں پاکستان کی شرکت کے سبب ہندوستان ہچکچاہٹ کا شکار ہے اور اسی وجہ سے اس سے ایونٹ کی میزبانی چھن جانے کا خطرہ ہے۔ مرکزی حکومت کی سرد مہری اور پاکستانی کرکٹرز کو ممکنہ طور پر این او سی جاری نہ کئے جانے کے سبب بی سی سی آئی نے ایونٹ کی میزبانی سے انکار کردیا اور ایشین کرکٹ کونسل کو بھی اس فیصلے سے آگاہ کردیا ہے جس کے بعد سری لنکا یا بنگلہ دیش میں سے کسی ایک کو میزبانی دئیے جانے کا امکان ہے۔اس سے قبل بی سی سی آئی نے اگلے چار سال کا شیڈول جاری کیا اور توقعات کے عین مطابق اس میں پاکستانی ٹیم سے کوئی سیریز نہیں رکھی گئی تاہم میڈیا رپورٹس کے بموجب اگر حکومت اجازت دیتی ہے تو پاکستان سے دوطرفہ سیریز کیلئے جگہ نکالی جا سکتی ہے۔ یہ پہلا موقع نہیں کہ ہندوستان کو پاکستان مخالفت کے سبب کسی ایونٹ کی میزبانی سے محروم ہونا پڑا ہو بلکہ پاکستانی ٹیم کی میزبانی نہ کرنے کا خواہاں بورڈ اس سے قبل انڈر19 ایشیا کپ کی بھی میزبانی گنوا چکا ہے۔یاد رہے کہ 2008 میں ممبئی حملے کے بعد سے پاکستان اور ہندوستان کے درمیان کرکٹ تعلقات ہر گزرتے دن کے ساتھ کشیدہ ہوتے جا رہے ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان 2007 کے بعد سے کوئی مکمل سیریز نہیں کھیلی گئی۔اس سلسلے میں 2012 میں سرد تعلقات پر جمی برف اس وقت پگھلی جب ہندوستان نے دو ٹی20 اور تین ون ڈے میچوں کی سیریز کیلئے پاکستان کی میزبانی کی اور تعلقات میں بہتری کی موہوم سی امید پیدا ہوئی تاہم 2014 میں مودی حکومت کے برسراقتدار آنے کے بعد ہند۔پاک کرکٹ سیریز نہیں ہوئی ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT