Friday , December 15 2017
Home / Top Stories / سری نگر میں کمسن لڑکے کے جنازے پر سیکورٹی فورسز کی شیلنگ

سری نگر میں کمسن لڑکے کے جنازے پر سیکورٹی فورسز کی شیلنگ

سری نگر ، 5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) گرمائی دارالحکومت سری نگر میں ہفتہ کے روز اُس وقت ایک فوٹو جرنلسٹ سمیت کم از کم دو درجن افراد زخمی ہوگئے جب سیکورٹی فورسز اور ریاستی پولیس کے اہلکاروں نے ایک کمسن لڑکے کے جلوس جنازہ پر آنسو گیس کی شیلنگ کی۔ لوگوں کا الزام ہے کہ 16 سالہ کمسن قیصر صوفی ساکنہ شالیمار اکتوبر کے آخری ہفتے میں زیر حراست تشدد کی وجہ سے شدید زخمی ہوگیا تھا۔انہیں بعدازاں شیر کشمیر انسٹی چیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں داخل کرایا گیا تھا جہاں اُس نے گذشتہ رات اپنی زندگی کی آخری سانسیں لیں۔ تاہم پولیس نے اس الزام کو کلی طور پر مسترد کردیا۔۔ رپورٹوں کے مطابق کمسن قیصر کی میت کو ہفتہ کی صبح شالیمار سے اپنے آبائی علاقہ صفا کدل لایا گیا۔صفا کدل میں جمع ہونے کے بعد لوگوں کی ایک بڑی تعداد قیصر کو سپرد لحد کرنے کے لئے جلوس کی صورت میں مزار شہداء عیدگاہ کی طرف روانہ ہوئے ۔

 

سرینگر میں سکیورٹی فور سیس اور مظاہرین میں تازہ تصادم
لاپتہ نوجوان کی موت کے خلاف احتجاج ، پولیس پر زہردینے کا الزام
سرینگر ۔ /5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) سرینگر کی ایک عیدگاہ کے علاقہ میں زہر دینے کے سبب ایک 16 سالہ لڑکے کی موت کے بعد آج سکیورٹی فورسیس اور مظاہرین کے درمیان پھوٹ پڑنے والی تازہ جھڑپوں میں کم سے کم 12 افراد زخمی ہوئے ہے ۔ سرینگر کے عیدگاہ علاقہ سے تعلق رکھنے والے ایک لڑکے قیصر صوفی دواخانہ میں علاج کے دوران آج صبح فوت ہوگیا ۔ جس کی تدفین کے بعد چند نوجوان قریب موجود سکیورٹی فورسیس پر سنگباری میں ملوث ہوگئے جس کے نتیجہ میں سکیورٹی فورسیس کو طاقت کے استعمال پر مجبور ہونا پڑا ۔ ایک پولیس عہدیدار نے کہا کہ 12 افراد زخمی ہوئے ہیں ۔ جن میں چھ کو پلٹس (بندوق کے ذریعہ فائر کئے جانے والے چھروں) سے زخم آئے ہیں ۔ صوفی /25 اکٹوبر سے لاپتہ تھا اور چھ دن بعد شالیمار علاقہ کے قریب حالت بیہوشی میں پایا گیا جس کو دواخانہ میں شریک کیا گیا تھا ۔ تاہم مقامی افراد نے الزام عائد کیا ہے کہ سکیورٹی فورسیس نے اس لڑکے کو زبردستی زہر کھلایا تھا ۔
کشمیر میں عسکریت پسند ہلاک
سرینگر 5 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) جنوبی کشمیر میں ضلع شوپیان کے ایک گاؤں میں تلاشی مہم کے دوران سکیوریٹی فورسیس اور عسکریت پسندوں کے درمیان انکاؤنٹر میں ایک جنگجو ہلاک اور ایک فوجی زخمی ہوگیا۔ ایک پولیس عہدیدار نے بتایا کہ باوثوق ذرائع سے یہ اطلاع ملنے پر کہ موضع دوبجان میں عسکریت پسند روپوش ہیں، سکیوریٹی فورسیس نے مقامی پولیس کے تعاون سے پورے علاقہ کا محاصرہ کرلیا اور عسکریت پسند جس مکان میں روپوش تھے، اُسے نشانہ بنانے کے لئے سکیوریٹی فورسیس پیشرفت کرنے لگی تو محاصرہ توڑنے کے لئے عسکریت پسندوں نے فائرنگ شروع کردی۔ سکیوریٹی فورسیس کی جوابی فائرنگ میں ایک عسکریت پسند ہلاک اور ایک سپاہی زخمی ہوگیا۔ آخری اطلاعات ملنے تک گھمسان لڑائی جاری تھی۔

اس دوران علحدگی پسندوں کے زیراہتمام احتجاج اور ہڑتال کے سبب وادی کشمیر میں مسلسل 120ویں دن بھی عام زندگی متاثر رہی ۔

TOPPOPULARRECENT