سری نگر میں 8 ویں محرم کے تاریخی ماتمی جلوس پر پابندی جاری

SRINAGAR, SEP 19 (UNI) Police detain Shia mourners at Batmaloo who defied restrictions imposed by the authorities to prevent Muharram procession in Srinagar on Wednesday. UNI PHOTO-5U

عزاداروں کے خلاف آنسو گیس کا استعمال، درجنوں گرفتار

سری نگر ، 19 ستمبر (یو ا ین آئی) کشمیر انتظامیہ نے بدھ کے روز گرمائی دارالحکومت سری نگر کے سات پولیس تھانوں کے تحت آنے والے علاقوں میں سیکورٹی پابندیاں عائد کرکے گروبازار علاقہ سے برآمدہونے والے 8 ویں محرم الحرام کے تاریخی ماتمی جلوس کو مسلسل 28 ویں مرتبہ نکالنے سے روک دیا۔ اگرچہ سینکڑوں عزاداروں نے سیکورٹی پابندیاں توڑتے ہوئے اس تاریخی ماتمی جلوس کو نکالنے کی کوشش کیں، لیکن سیکورٹی فورسز اور ریاستی پولیس کے اہلکاروں نے انہیں منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس اور لاٹھی چارج کا استعمال کیا۔ اس کے علاوہ درجنوں عزاداروں کو تحویل میں بھی لیا گیا۔ سخت مزاحمت کے بعد سیکورٹی فورسز نے سیاہ کپڑوں میں ملبوس بعض عزاداروں کو مولانا آزاد روڑ پر کچھ دیر کے لئے نوحہ خوانی کرنے کی اجازت دی۔ یو این آئی کے نامہ نگار کے مطابق سیکورٹی فورسز نے ڈل گیٹ علاقہ میں جمع ہوکر تاریخی لال چوک کی طرف پیش قدمی کرنے والے عزاداروں کے خلاف آنسو گیس کے متعدد گولے داغے اور لاٹھی چارج کیا۔ بتہ مالو، جہانگیر چوک، ہری سنگھ ہائی اسٹریٹ، ریگل چوک اور تاریخی لال چوک میں جمع ہونے والے عزاداروں کو منتشر کرنے کے لئے لاٹھی چارج کیا گیا۔ مولانا آزاد روڑ پر بھی پولو گراؤنڈ کے نزدیک آنسو گیس کے کچھ گولے داغے گئے ۔ سیکورٹی فورسز کی کاروائی میں متعدد عزاداروں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ تاہم پولیس ذرائع نے بتایا کہ سیول لائنز میں تعینات سیکورٹی فورس اہلکاروں نے انتہائی صبر وتحمل سے کام لیا اور پابندیوں کی خلاف وزری کے مرتکبین کے خلاف طاقت کے استعمال سے اجتناب کیا گیا۔ اس دوران ضلع سری نگر میں بدھ کے روز سرکاری احکامات پر تمام تعلیمی ادارے بند رہے جبکہ سیول لائنز میں پابندیوں کی وجہ سے دکانیں اور تجارتی مراکز بند رہے جبکہ سڑکوں پر گاڑیوں کی آمدورفت جزوی طور پر متاثر رہی۔
سیول لائنز میں پابندیوں اور سیکورٹی فورسز و عزاداروں کے درمیان جھڑپوں کی وجہ سے شہر میں افراتفری کا ماحول دیکھا گیا۔

TOPPOPULARRECENT