Monday , October 22 2018
Home / دنیا / سشماسوراج کا اسی روٹ پر ٹرین کا سفر

سشماسوراج کا اسی روٹ پر ٹرین کا سفر

جس پر گاندھی جی نے سفر کیا تھا

7 جون 1893ء کی یاد تازہ
گاندھی اور منڈیلا نے ناانصافی اور نسل پرستی کے
خلاف آواز اٹھائی

پیٹرمیرٹینزبرگ ۔ 7 جون (سیاست ڈاٹ کام) وزیرخارجہ ہند سشماسوراج نے آج پینٹرچ سے پیٹرمیرٹینزبرگ جانے کیلئے ٹرین کا سفر کیا۔ یہ وہی ریلوے اسٹیشن ہے جب نوجوان مہاتما گاندھی کو 7 جون 1893ء کی رات کو ٹرین کے ایک ڈبے سے صرف اس لئے باہر ڈھکیل دیا گیا تھا کہ وہ ڈبہ ’’صرف گوروںکیلئے‘‘ مخصوص تھا۔ اس واقعہ نے مہاتما گاندھی کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا تھا اور جس نے انہیں ستیہ گرہ جیسے احتجاج کرنے پر مجبور کردیا۔ آج بعض تاریخی تجزیہ نگار یہی کہتے ہیں کہ مہاتما گاندھی کو ٹرین کے ڈبے سے باہر ڈھکیل دینے کا واقعہ اگر رونما نہ ہوتا تو ہندوستان انگریزوں کے راج سے کبھی آزاد نہ ہوتا کیونکہ اسی واقعہ نے مہاتما گاندھی کے دل میں ہندوستان کی آزآدی کے جذبے کو مضبوط کردیا۔ پانچ روزہ دورہ پر آئیں سشماسوراج نے کل فنیکس سٹیلمنٹ میں شجرکاری بھی کی تھی۔ یہ وہی مقام ہے جہاں گاندھی جی کو اپنے عدم تشدد کے نظریہ کو فروغ حاصل ہوا۔ وزارت خارجہ کے ترجمان رویش کمار نے یہ بات بتائی۔ بعدازاں سٹی ہال کے ایک بینکوٹ میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نیلسن منڈیلا اور مہاتما گاندھی دنیا کی دو ایسی شخصیات ہیں جنہوں نے ان لوگوں میں امید کی کرن جگائی جو عرصہ دراز سے امتیازی سلوک اور ناانصافی کا شکار رہے۔ گاندھی جی کو ٹرین کے ڈبے سے باہر پھینک دیئے جانے کے واقعہ کی آج 125 ویں سالگرہ تھی اور اس موقع پر سشماسوراج نے اس واقعہ کی یاد تازہ کرنے کیلئے اسی روٹ پر ٹرین کا سفر کیا جس روٹ پر مہاتما گاندھی نے سفر کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ مہاتما گاندھی نے سامراجیت اور نیلسن منڈیلا نے نسل پرستی کے خلاف آوازیں اٹھائیں اور اپنے مقاصد میں کامیاب ہوئے۔

TOPPOPULARRECENT