Monday , September 24 2018
Home / Top Stories / سشما سوراج نے نیک نیتی سے للت مودی کی مدد کی: جیٹلی

سشما سوراج نے نیک نیتی سے للت مودی کی مدد کی: جیٹلی

نئی دہلی ۔ 16 ۔ جون (سیاست ڈاٹ کام) وزیر خارجہ سشما سوراج کی سابق آئی پی ایل کمشنر داغدار للت مودی کو برطانیہ سفر کرنے کے دستاویزات حاصل کرنے میں مدد دینے کے سلسلہ میں پیدا ہونے والے تنازعہ میں آج ایک نیا موڑ لے لیا جبکہ چیف منسٹر راجستھان وسندھرا راجے کی ایک دستاویز منظر عام پر آئی جس میں انہوں نے مبینہ طور پر نقل مقام کے منصوبہ کی تائ

نئی دہلی ۔ 16 ۔ جون (سیاست ڈاٹ کام) وزیر خارجہ سشما سوراج کی سابق آئی پی ایل کمشنر داغدار للت مودی کو برطانیہ سفر کرنے کے دستاویزات حاصل کرنے میں مدد دینے کے سلسلہ میں پیدا ہونے والے تنازعہ میں آج ایک نیا موڑ لے لیا جبکہ چیف منسٹر راجستھان وسندھرا راجے کی ایک دستاویز منظر عام پر آئی جس میں انہوں نے مبینہ طور پر نقل مقام کے منصوبہ کی تائید کی تھی۔ تاہم چیف منسٹر راجستھان وسندھرا راجے نے اس دستاویز سے لاتعلقی کا اظہار کرتے ہوئے سشما سوراج تنازعہ سے دوری اختیار کرلی۔ تاہم سشما سوراج کو مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی کی تائید حاصل ہوئی، جنہوں نے کہا کہ سشما نے جو کچھ کیا ہے، نیک نیتی اور انسانی ہمدردی کی بنیادوں پر کیا ہے۔ وسندھرا راجے سے ایک میڈیا مقدمہ میں سوال کیا کہ دستاویز ’’گواہ کا بیان‘‘ کے بارے میں ان کا کیا کہنا ہے۔ وسندھرا راجے نے کہا کہ اس کا فیصلہ آپ کو کرنا ہوگا۔ تاہم شام کو دیر گئے راجے نے اس دستاویز سے دوری اختیار کرلی اور ذرائع ابلاغ سے الٹا سوال کیا کہ وہ نہیں جانتی کہ ذرائع ابلاغ کس دستاویز کی بات کر رہے ہیں۔

تاہم چیف منسٹر راجستھان کی تائید بی جے پی اور اس کی حکومت کیلئے مزید پریشانی کا باعث بن گئی جو پہلے ہی بڑے سیاسی بحران کے خلاف جدوجہد کر رہی ہے۔ گزشتہ ایک سال سے کچھ زیادہ دور اقتدار میں بی جے پی حکومت کو درپیش یہ سب سے بڑا بحران ہے۔ قبل ازیں مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی نے نقصان کا ازالہ کرنے کی کوشش کرتے ہوئے سشما سوراج کی تائید کی۔ دو دن قبل یہ خبریں آئی تھی کہ وزارت فینانس اور وزارت خارجہ میں ایک دوسرے پر الزامات کا تبادلہ جاری ہے کہ دہلی ہائیکورٹ کے حکمنامہ کے خلاف اپیل کونسی وزارت کو کرنی چاہئے ۔ قبل ازیں سشما سوراج اور ارون جیٹلی نے مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ سے ملاقات کر کے پورے مسئلہ پر ایک گھنٹہ تبادلہ خیال کیا ۔ بعد ازاں راج ناتھ سنگھ اور ارون جیٹلی نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تمام عائد الزامات بے بنیاد ہیں۔ سشما سوراج اور صدر پارٹی کے بیان سے ظاہر ہوتا ہے کہ انہوں نے جو کچھ کیا تھا، نیک نیتی سے کیا تھا۔ پوری حکومت اور پارٹی اس مسئلہ پر متحد ہے۔

دریں اثناء جیٹلی کی اس تنازعہ کے بارے میں خاموشی پر قیاس آرئیاں گرم تھیں۔ اطلاعات کے بموجب وزارت فینانس اور وزارت خارجہ للت مودی کے پاسپورٹ کی گزشتہ سال اگست میں بحالی کے بارے میں دہلی ہائیکورٹ کے حکمنامہ کے خلاف کس وزارت کو اپیل کرنی چاہئے، اس بارے میں باہمی الزامات کا تبادلہ ہورہا ہے۔ کانگریس نے ارون جیٹلی کی وزیر خارجہ سشما سوراج کو مودی کے تنازعہ میں تائید پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی وزیر فینانس نے توثیق کردی ہے کہ للت مودی کے خلاف ای ڈی کی جانب سے تحقیقات جاری ہیں اور بلو کارنر نوٹس جاری کردی گئی ہے۔ اس کے باوجود وہ سشما کی تائید کر رہے ہیں۔ اس طرح وہ خود اپنے آپ تردید کر رہے ہیں۔ کانگریس کے جنرل سکریٹری ڈگ وجئے سنگھ نے اپنے ٹوئیٹر پر یہ ردعمل تحریر کیا۔ دریں اثناء ممبئی سے موصولہ اطلاع کے بموجب شیوسینا کے ترجمان سامنا کے ادارہ میں تحریر کیا گیا ہے کہ بی جے پی کی حلیف جماعت شیو سینا نے دعوی کیا ہے کہ سشما سوراج کو بی جے پی سے باہر نکالنے کیلئے ایک سیاسی کھیل کے تحت تنازعہ کا نشانہ بنایا گیا ہے

اور وزیر اعظم نریندر مودی سے مطالبہ کیا کہ سشما سوراج کی صاف ستھری ساکھ کو داغدار کرنے میں سرگرم افراد کا پتہ چلانے کیلئے تحقیقات کا حکم دیا جائے ۔ شیو سینا نے الزام عائد کیا کہ ’’ سشما سوراج کو ایک تنازعہ میں ملوث کرنا اور ان کے بارے میں کئی سوالات اٹھانا ایک بڑا سیاسی کھیل ہے جو دراصل سشما کو بی جے پی اور قومی سیاست سے کنارہ کشی کرنے کیلئے کھیلا جارہا ہے‘‘ ۔ ’سامنا‘ کے اداریہ نے مزید لکھا کہ مستقبل میں وزیر اعظم مودی اور ان کے کابینی رفقاء بھی اس قسم کے تنازعہ میں پھنسائے جاسکتے ہیں اور ایک حکمت عملی کے ذریعہ انہیں ہراساں کیا جاسکتا ہے لیکن سوال یہ ہے کہ وہ کون ہے جو بے جان پروں کو فوت پرواز دے رہا ہے ۔ اگر کوئی شخص وزارت خارجہ کو کمزور کرنے کیلئے حملہ کرتا ہے اور مودی حکومت کے حوصلے پست کرنے کی کوشش کرتا ہے تو ایسا شخص یقینا ملک کو نقصان پہونچا رہا ہے ۔ یہ ایک بہت بڑا سیاسی کھیل ہے اور وزیر اعظم مودی کو چاہئے کہ وہ اس کھیل کو ختم کریں‘‘۔

TOPPOPULARRECENT