سعودی عرب ، ترکی کے مصر سے پرامن تعلقات کا خواہاں : اردغان

انقرہ۔ 4 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب اس بات کا خواہاں ہے کہ ترکی مصر کے ساتھ پرامن رویہ اختیار کرے جو ترکی اور سعودی عرب کے درمیان نااتفاقی کا واحد نکتہ ہے۔ صدر ترکی رجب طیب اردغان نے یہ بات کہی۔ انہوں نے ہی حال میں تیل کی دولت سے مالامال ملک کا دورہ کیا تھا جبکہ حسن اتفاق سے اس وقت سعودی عرب کے دورہ پر علیحدہ طور پر صدر مصر بھی وہاں

انقرہ۔ 4 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب اس بات کا خواہاں ہے کہ ترکی مصر کے ساتھ پرامن رویہ اختیار کرے جو ترکی اور سعودی عرب کے درمیان نااتفاقی کا واحد نکتہ ہے۔ صدر ترکی رجب طیب اردغان نے یہ بات کہی۔ انہوں نے ہی حال میں تیل کی دولت سے مالامال ملک کا دورہ کیا تھا جبکہ حسن اتفاق سے اس وقت سعودی عرب کے دورہ پر علیحدہ طور پر صدر مصر بھی وہاں پہنچے تھے۔ سعودی عرب سے ترکی واپس جاتے ہوئے روزنامہ ’’حریت‘‘ کو ایک انٹرویو کے دوران اردغان نے کہا کہ سعودی عرب بے شک یہی چاہتا ہے کہ ترکی، مصر کے ساتھ پرامن تعلقات استوار کرے۔ انہوں نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ البتہ اس بات کے لئے اصرار نہیں کیا گیا۔ یہ بات انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہی جہاں ان سے یہ پوچھا گیا تھا کہ کیا سعودی عرب کے نئے حکمراں شاہ سلمان، مصر اور ترکی کے درمیان پائی جانے والی تلخیوں کو دور کرنے کیلئے ثالث کے فرائض انجام دیں گے؟ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ ترکی اور مصر کے تعلقات اس وقت سے خراب ہیں جب 2013ء میں اخوان المسلمین قائد محمد مرسی کو معزول کرکے عبدالفتاح السیسی کو ملک کا صدر بنایا گیا تھا۔ مصر نے ترکی پر الزام لگایا تھا کہ وہ اس کے (مصر) داخلی معاملات میں مداخلت کرتے ہوئے اخوان المسلمین کی تائید کررہا ہے۔ ترکی نے السیسی کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا تھا کہ ایک منتخبہ حکومت کا تختہ اُلٹنا انتہائی غیرجمہوری عمل ہے۔

TOPPOPULARRECENT