Wednesday , September 26 2018
Home / عرب دنیا / سعودی ولیعہد دوم شہزادہ مقرن بینکوں پر برس پڑے

سعودی ولیعہد دوم شہزادہ مقرن بینکوں پر برس پڑے

دبئی، 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سعودی ولی عہد دوم شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز اپنے ملک میں کام کرنے والے بینکوں پر برس پڑے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ بینک جوکچھ لے رہے ہیں،اس کے مقابلے میں ان کا معاشرے کی تعمیر وترقی میں کردار بہت تھوڑا ہے۔ شہزادہ مقرن کا یہ بیان مختلف سعودی اخبارات نے اپنی چہارشنبہ کی اشاعت میں نقل کیا ہے اور اس کا مقصد عام

دبئی، 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سعودی ولی عہد دوم شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز اپنے ملک میں کام کرنے والے بینکوں پر برس پڑے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ بینک جوکچھ لے رہے ہیں،اس کے مقابلے میں ان کا معاشرے کی تعمیر وترقی میں کردار بہت تھوڑا ہے۔ شہزادہ مقرن کا یہ بیان مختلف سعودی اخبارات نے اپنی چہارشنبہ کی اشاعت میں نقل کیا ہے اور اس کا مقصد عام سعودی شہریوں کو درپیش مشکلات کو اجاگر کرنا ہے۔انھوں نے کہا ، ’’مجھے کوئی ایسا بینک دکھائیے جس نے کوئی عطیہ دیا ہو یا مدد کی کوئی پیشکش کی ہو‘‘۔ تاہم ان کے اس بیان سے ایسا کوئی اشارہ نہیں ملتا کہ سعودی عرب میں بینکوں کے خلاف کوئی اقدام کیا جارہا ہے۔

روزنامہ الحیات کی رپورٹ کے مطابق شہزادہ مقرن نے ریاض میں ایک خیراتی ادارہ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بینکوں کے حوالے سے کہا کہ وہ کئی لحاظ سے زیریں جانب ہیں۔وہ شہریوں اور مملکت سے جو کچھ وصول کرتے ہیں،اس کے مقابلے میں بہت تھوڑا لوٹاتے ہیں۔ سعودی مملکت میں عام شہریوں کو رہنے کیلئے مکانوں کی قلت کا سامنا ہے اور وہ بے روزگاری کا بھی شکار ہیں۔ سعودی عرب میں گزشتہ سال کی چوتھی سہ ماہی میں سرکاری طور پر بے روزگاری کی شرح 11.5 فی صد تھی۔ روزنامہ ’عرب نیوز‘ نے ایک رپورٹ میں بتایا کہ 2013ء کے دوران سعودی عرب کے کمرشل بینکوں کا مجموعی منافع 37 ارب 60 کروڑ ریال رہا اور یہ 2012ء کے مقابل 7 فی صد زیادہ تھا۔ سعودی عرب میں سماجی فلاح و بہبود پر 2011ء میں ’بہار عرب ‘ کے آغاز کے بعد سے زیادہ توجہ مرکوز کی جارہی ہے

TOPPOPULARRECENT