Wednesday , July 18 2018
Home / دنیا / سعودی کو یمن پر عائد تحدیدات برخاست کرنے گوٹیرس کا مکتوب

سعودی کو یمن پر عائد تحدیدات برخاست کرنے گوٹیرس کا مکتوب

اقوام متحدہ۔ 17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انٹونیو گوٹیرس نے آج اس بات پر انتہائی مایوسی کا اظہار کیا کہ سعودی قیادت والے اتحاد نے یمن پر عائد تحدیدات برخاست کرنے سے انکار کردیا ہے اور اس سلسلہ میں سکریٹری جنرل نے راست طور پر ریاض میں واقع نمائندوں کو مکتوب تحریر کیا ہے۔ گوٹیرس کے ترجمان نے یہ بات بتائی۔ یاد رہے کہ سعودی اتحاد نے یمن کے بحری اور فضائی راستے بند کردیئے تھے۔ یہی نہیں 6 نومبر کو ایران کی تائید والے حوثی باغیوں کے ذریعہ ریاض کے قریب میزائل داغے جانے کے بعد زمینی سرحدوں کو بھی بند کردیا تھا۔ یمن پر عائد تحدیدات برخاست کرنے کے لیے اقوام متحدہ کے عہدیداروں نے متعدد اپیلیں کی تھیں تاہم ان پر کوئی توجہ نہیں دی گئی۔ گوٹیرس نے سعودی سفیر کو مکتوب تحریر کرتے ہوئے ایکبار پھر اپیل کی کہ یمن پر عائد تحدیدات کو فوری اثر کے ساتھ برخاست کیا جائے۔ جب سے تحدیدات عائد ہوئی ہیں انسانیت شرمسار ہے اور انسانی بنیادوں پر سربراہ کی جانے والی اشیاء بھی ضرورت مندوں تک نہیں پہنچ رہی ہیں۔ اقوام متحدہ کے ترجمان اسٹیفن ڈوجارک نے کہا کہ یمن سے ہمیں جو بھی خبریں اور تصاویر دیکھنے مل رہی ہیں انہیں دیکھ کر بہت دکھ ہوتا ہے کیوں کہ یمنی عوام جس طرح متاثر ہورہے ہیں اس کی کوئی نظیر نہیں ملتی۔ زیادہ افسوس اس بات کا ہے کہ یہ انسانوں کے ہاتھوں پیدا کردہ مصیبت ہے کوئی قدرتی آفت نہیں کہ رودھوکر خاموش ہوجائیں گے۔ ترجمان کے مطابق مسٹر گوٹیرس نے اسے ’’اسٹوپڈوار‘‘ قرار دیا ہے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ اقوام متحدہ نے یمن کو انسانی بنیادوں پر سب سے زیادہ متاثرہ علاقہ قرار دیا ہے جہاں 17 ملین عوام کو غذا کی ضرورت ہے جبکہ ان میں سے 7 ملین عوام فاقہ کشی کا شکار ہیں اور قحط سالی بھی ان کے مصائب میں اضافہ کرسکتی ہے۔ مزید برآں ہیضہ جیسی بیماری نے بھی یہاں پر لاکھوں لوگوں کو متاثر کیا ہے۔ تقریباً ایک ملین افراد بیمار ہیں اور 2200 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT