Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / سماجوادی قائد مقننہ کے انتخاب کا اکھیلیش یادو کو اختیار

سماجوادی قائد مقننہ کے انتخاب کا اکھیلیش یادو کو اختیار

شیوپال یادو اور اعظم خان کے ناموں پر غور ۔ 25 مارچ کو قومی عاملہ کا اجلاس

لکھنو 16 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) سماجوادی پارٹی کے نو منتخب ارکان اسمبلی کے ایک اجلاس میں پارٹی کے قومی صدر اکھیلیش یادو کو یہ اختیار دیا گیا ہے کہ وہ ایس پی قائد مقننہ کا انتخاب کریں جو ریاست میں قائد اپوزیشن ہونگے ۔ یہ اجلاس سماجوادی پارٹی کے ہیڈ کوارٹرس پر منعقد ہوا تھا جس میں اکھیلیش یادو ‘ ان کے چچا شیوپال یادو اور سینئر لیڈر اعظم خان کے علاوہ پارٹی کے دوسرے ذمہ داران نے شرکت کی ۔ تاہم ابھی یہ فیصلہ نہیں ہوا ہے کہ قائد اپوزیشن کون ہوگا ۔ نو منتخب ارکان اسمبلی کے اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا کہ 25 مارچ کو پارٹی کی قومی عاملہ کا اجلاس منعقد ہوگا ۔ سماجوادی پارٹی رکن اسمبلی پارس ناتھ یادو نے اجلاس کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے پارٹی کے صدر اکھیلیش یادو کو اختیار دیا ہے کہ وہ اس نام پر فیصلہ کریں۔ پارٹی کی قومی عاملہ کا اجلاس 25 مارچ کو منعقد کیا جائیگا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ کوئی جائزہ اجلاس نہیں ہے بلکہ یہ ہولی کے بعد ارکان اسمبلی کی رسمی ملاقات ہے ۔ سماجوادی پارٹی کو گذشتہ اسمبلی میں 224 نشستوں پر کامیابی ملی تھی تاہم اس نے اس بار صرف 47 پر کامیابی حاصل کی ہے ۔ چونکہ یہ سب سے بڑی اپوزیشن جماعت ہے اس لئے اس کے قائد مقننہ ریاست میں اپوزیشن کے لیڈر بھی ہونگے ۔ سماجوادی پارٹی کے ترجمان راجیندر چودھری نے کہا کہ اکھیلیش نے نو منتخب ارکان اسمبلی کو انتہائی مشکل حالات میں بھی کامیابی حاصل کرنے پر مبارکباد پیش کی ۔ انہوں نے کہا کہ جب وزیر اعظم اور بی جے پی کے صدر عوام کو گمراہ کر رہے تھے اور جمہوریت میں آواز دبانے کی کوشش کر رہے تھے ایسے حال میں سماجوادی پارٹی نے 47 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کچھ ارکان اسمبلی نے مبینہ طور پر الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں چھیڑ چھاڑ کا مسئلہ بھی اٹھایا اور مطالبہ کیا کہ مستقبل میں انتخابات بیالٹ پیپرس استعمال کرتے ہوئے منعقد کئے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ ارکان اسمبلی سے کہا گیا ہے کہ وہ بی جے پی کے عوام مخالف اقدامات کو اجاگر کریں جب وہ ریاست میں حکومت سنبھال لے گی ۔ ارکان اسمبلی کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ سوشلزم کیلئے اپنی جدوجہد جاری رکھیں۔ قبل ازیں اجلاس میں شرکت سے قبل اکھیلیش یادو ‘ ان کے چچا شیوپال یادو اور اعظم خان نے تقریبا آدھے گھنٹے تک بند کمرے میں بات چیت کی ۔ انتخابات کے دوران مہم میں شیوپال یادو کو شامل نہیں کیا گیا تھا اور وہ صرف اپنے حلقہ انتخاب جسونت نگر ( ایٹاوہ ) تک محدود تھے ۔ پارٹی ذرائع نے کہا کہ قائد اپوزیشن کیلئے شیوپال اور اعظم خان کے نام کے علاوہ پارٹی لیڈر رام گوند چودھری کے نام پر بھی غور کیا جا رہا ہے ۔ گذشتہ ہفتے شیوپال میں پارٹی میں اتحاد کی بحالی کا عزم ظاہر کیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT