Friday , November 24 2017
Home / ہندوستان / سندھ آبی سمجھوتہ پر ہند ۔ پاک مذاکرات کسی پیشرفت کے بغیر ختم

سندھ آبی سمجھوتہ پر ہند ۔ پاک مذاکرات کسی پیشرفت کے بغیر ختم

دونوں ملکوں کے درمیان آبی مسائل کی خوشگوار یکسوئی کیلئے مساعی جاری رکھنے ورلڈ بینک کا عہد
واشنگٹن ۔ /16 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) دریائے سندھ آبی سمجھوتہ پر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تازہ ترین مرحلے کی بات چیت آج کسی اتفاق کے بغیر ختم ہوگئی ۔ عالمی بینک نے یہ اطلاع اور ادعاء کیا کہ مسائل کی یکسوئی کیلئے وہ مکمل غیر جانبداری کے ساتھ اپنا کام جاری رکھے گی ۔ ہندوستان اور پاکستان نے باہمی تعلقات میں سردمہری کے درمیان عالمی بینک کے ہیڈکوارٹرز پر /14 اور /15 ستمبر کو ریٹل اور کشن گنگا پن بجلی گھر کے پراجکٹوں پر بات چیت کی جس پر اسلام آباد نے اعتراض کیا تھا ۔عالمی بینک نے اپنے بیان میں کہا کہ ’’بات چیت کے اختتام پر دونوںملکوں کے درمیان کوئی اتفاق رائیپیدا نہیں ہوسکا ۔ ان مسائل کے سمجھوتہ کے ضابطوں کے مطابق خوشگوار اور دوستانہ حل کو یقینی بنانے کیلئے عالمی بینک پوری غیر جانبداری کے ساتھ اپنا کام جاری رکھے گی ‘‘ ۔ سندھ آبی سمجھوتہ کے تحت کشن گنگا اور ریٹل پن بجلیپلانٹس کے تکنیکی مسائل پر دونوں ملکوں کے درمیان معتمدین کی سطح پر بات چیت کے اختتام کے بعدعالمی بینک نے مزید کہا کہ ’’دونوں ملکوں نے مذاکرات کی ستائش کی اور سمجھوتہ کے بقاء و تحفظ کے لئے اپنے عہد کو دوہرایا ‘‘ ۔ عالمی بینک نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ ’’عالمی بینک اس سمجھوتہ کے تحت اپنی ذمہ داریوں کی تکمیل کیلئے خلوص نیک ، باہمی اعتماد ، مکمل غیر جانبداری اور شفافیت کے ساتھ کام اپنا جاری رکھنے کے عہد کی پابند ہے ‘‘ ۔ عالمی بینک کی اعانت سے ہندوستان اور پاکستان کے درمیان 9 سال تک مذاکرات کے بعد 1960 ء میں دریائے سندھ پر آبی سمجھوتہ کیا گیا تھا جس کے دستخط کنندگان میں ان دونوں ملکوں کے علاوہ یہ کلیدی عالمی مالیاتی ادارہ بھی شامل ہے ۔ ہندوستانی وفد کی قیادت معتمد آبی وسائل امرجیت سنگھ نے کی ۔ پاکستانی وفد کی قیادت معتمد آبی وسائل ڈیویژن عارف احمد خاں نے کی ۔ معتمد پانی و بجلی یوسف نسیم کھوکر ، سندھ آبی سمجھوتہ کے ہائی کمشنر مرزا آصف بیگ اور جوائنٹ سکریٹری سید مہر علی شاہ بھی بات چیت میں شامل تھے ۔

TOPPOPULARRECENT