Saturday , October 20 2018
Home / دنیا / سنگاپور کے بعد کم جونگ کو امریکی دورہ کی دعوت دی جائیگی : ٹرمپ

سنگاپور کے بعد کم جونگ کو امریکی دورہ کی دعوت دی جائیگی : ٹرمپ

l 12 جون کو ہونے والی ملاقات خوشگوار ہونا لازمی
l امریکی مقاصد کی عدم تکمیل پر ملاقات منسوخ یا ملتوی بھی کی جاسکتی ہے
l ایران نیوکلیئر معاہدہ سے ا مریکہ کے الگ ہونے کے بعد ایران کے تیور تبدیل

واشنگٹن ۔ 8 جون (سیاست ڈاٹ کام) امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے آج ایک اہم بیان دیتے ہوئے کہا کہ سنگاپور میں 12 جون کو شمالی کوریائی قائد کم جونگ ان سے ملاقات اگر خوشگوار رہی تو انہیں امریکہ کے دورہ کی دعوت بھی دی جائے گی لیکن ہمیشہ کی طرح یہ انتباہ بھی دیا کہ اگر ملاقات کے ذریعہ ان کے (ٹرمپ) مقاصد کی تکمیل ہوتی نظر نہیں آئی تو وہ ملاقات کو منسوخ بھی کرسکتے ہیں۔ یاد رہیکہ امریکہ اور اس کے علاقائی حلیف اس بات کے خواہاں ہیں کہ شمالی کوریا اپنے نیوکلیئر پروگرام سے مکمل طور پر دستبردار ہوجائے۔ ٹرمپ اور کم جونگ کی ملاقات سنگاپور کے ایک چھوٹے جزیرہ سنیٹوزہ میں ہوگی جو اپنی نوعیت کی کسی برسرکار امریکی صدر اور شمالی کوریا کے قائد کے درمیان ہونے والی پہلی ملاقات ہوگی۔ یاد رہیکہ کل وائیٹ ہاؤس میں امریکی صدر سے جاپان کے وزیراعظم شینزوابے نے ملاقات کی تھی جس کے بعد ہی کم جونگ سے ملاقات کے بارے میں ٹرمپ نے مندرجہ بالا ریمارک کیا۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہیکہ شینزوابے نے ٹرمپ ۔ کم جونگ ملاقات سے قبل امریکہ کا ہنگامی دورہ اس لئے کیا ہے کیونکہ اس ملاقات سے بعض ممالک کو یہ اندیشہ ہوگیا ہے کہ کہیں ان کے مفاد کو امریکہ نظرانداز نہ کرے۔ اخباری نمائندوں نے ٹرمپ سے سوال کیا تھا کہ کیا وہ کم جونگ کو وائیٹ ہاؤس میں مدعو کریں گے یا فلوریڈا میں واقع ان کے (ٹرمپ) ریسارٹ مار ۔ اے ۔ لاگو میں مدعو کریں گے جس کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے مسکراتے ہوئے کہا کہ ہم وائیٹ ہاؤس سے شروعات کریں گے۔ انہوں نے البتہ ایک بار پھر اپنی بات دہرائی کہ اگر اس ملاقات سے امریکہ کے مقاصد کی تکمیل ہوتی نظر نہیں آئی تو وہ اس کا بائیکاٹ بھی کرسکتے ہیں۔ یعنی صرف تین روز قبل بھی ’’ہاں‘‘ اور ’’نا‘‘ والا معاملہ جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا ہو بھی سکتا ہے اور نہیں بھی ہوسکتا۔ میں یہی توقع کروں گا کہ ایسا نہ ہو۔ ایران کی طرف ہی دیکھئے۔ جب سے امریکہ ایران نیوکلیئر معاہدہ سے الگ ہوا ہے ایران کے تیور ہی بدلے ہوئے ہیں۔ یورینیم افزودگی میں اضافہ کی بات کہی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT