سوائن فلو کی وباء پر عوام میں تشویش

نظام آباد میں محکمہ صحت کے عہدیداروں پر لاپرواہی کا الزام ، شعور بیداری ناگزیر

نظام آباد میں محکمہ صحت کے عہدیداروں پر لاپرواہی کا الزام ، شعور بیداری ناگزیر
نظام آباد:15؍ جنوری (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ضلع نظام آباد کے ڈچپلی منڈل اندلوائی میں انور حسین نامی لڑکا سوائن فلو کی وجہ سے فوت ہوجانے کی افواہوں پر شک و شبہات ظاہر کئے جارہے ہیں جبکہ محکمہ صحت کے عہدیدار انور حسین کی موت نمونیاہونے کا انکشاف کیا ہے لیکن اس کے باوجود بھی حیدرآباد میں تیزی کے ساتھ سوائن فلو کی وباء پھیلنے اور ضلع کے اندلوائی کے انور حیدرآباد میں فوت ہونے کی وجہ سے سوائن فلو کے بارے میں ضلع کی عوام میں تشویش پائی جارہی ہے اور محکمہ صحت کے عہدیداروں کی لاپرواہی پر ناراضگی ظاہر کی جارہی ہے۔ ضلع نظام آباد کے تین ایریا ہاسپٹل 44 پرائمری ہیلت سنٹرس، 718 سب سنٹرس کے علاقوں میں سوائن فلو کی وباء اور اس سے حفاظت کے بارے میں محکمہ صحت کے عہدیداروں کی عدم شعور بیداری کی وجہ سے خاص طور سے دیہاتیوں میں تشویش پائی جارہی ہے۔ ضلع میں ڈینگو، ملیریاو دیگر امراض کے بارے میں اب تک کوئی بھی شعور بیداری پروگرامس نہیں کئے گئے۔ دماغی بخار، ڈینگوکے بخار میں خون کی مسلسل کمی ہوتی ہے اور اس بارے میں محکمہ صحت کے عہدیداروں کی شعور بیداری ناگزیر ہے۔ محکمہ صحت کے عہدیدار دیہاتوں میں کیمپس کا انعقاد عمل میں لاتے ہوئے خون کے معائنہ و دیگر معائنہ کرنا عہدیداروں کی ذمہ داری ہے اور ان کے فرائض کی انجام دہی میں محکمہ صحت کے عہدیدار لاپرواہی برت رہے ہیں۔ حیدرآباد میں سوائن فلو کی وباء تیزی سے پھیلنے کا ہر روز اخبارات میں بیانات شائع ہورہے ہیں اور دواخانہ میں زیر علاج اپنے رشتہ داروں سے ملاقات کیلئے ہر روز سینکڑوں افراد حیدرآباد کا دورہ کرتے ہیں انور حسین بھی اپنے والد کے علاج کے بہانے سے حیدرآباد گئے ہوئے تھے اور نمونیا کی بیماری میں مبتلا ہوکر فوت ہوگئے تھے جبکہ محکمہ صحت کے عہدیدار انور حسین کی موت نمونیا سے ہونے کی وضاحت بھی پیش کررہے ہیں لیکن اس کے باوجود بھی عوام میں موجودہ تجسس کو دور کرنے کیلئے کوئی اقدامات نہیں کررہے ہیں۔ کروڑہا روپئے کی لاگت سے نظام آباد میں میڈیکل کالج تعمیر کرتے ہوئے دواخانہ قائم کیا گیا لیکن میڈیکل کالج کے تحت واقع دواخانہ میں مریضوں کیلئے کوئی سہولتیں نہیں ہے۔ دور دراز کے مقامات سے نظام آباد آنے والے مریضوں اور شہر نظام آباد کے مریضوں کے کوئی طبی معائنہ نہیں کئے جارہے ہیں اور ہر سنگین کیس کو حیدرآباد منتقل کیا جارہا ہے جبکہ یہاں پر ماہر ڈاکٹر ہونے کے باوجود بھی ان کی خدمات سے استفادہ نہیں ہورہا ہے۔ محکمہ صحت کے عہدیدار عوام کو فائدہ پہنچانے میں ناکام کے علاوہ ہیلت کیمپس کے انعقاد میں تساہلی برتنے کا بھی الزام عائد کیا جارہا ہے۔ ضلع کلکٹر مسٹر رونالڈ روس محکمہ صحت کے عہدیداروں کو طبی سہولتیں پہنچانے میں کوئی کسر باقی نہ رکھنے کی ہدایت کے باوجود بھی عہدیدار اس سلسلہ میں کوئی اقدامات نہیں کررہے ہیں۔ موسمی وباء کے شکار مریضوں کی علاج کے ساتھ ساتھ عوام میں شعور بیدار کرنے کیلئے محکمہ صحت کے عہدیدار کی کارکردگی ناگزیر ہے اور عوام کا بھی یہی مطالبہ ہے لہذا محکمہ صحت کے عہدیدار اس سلسلہ میں اقدامات کریں تو بہتر ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT