Wednesday , January 17 2018
Home / شہر کی خبریں / سٹ ون موتی گلی اور پرانی حویلی کی جائیدادوں پر قانونی رسہ کشی

سٹ ون موتی گلی اور پرانی حویلی کی جائیدادوں پر قانونی رسہ کشی

دونوں اداروں کے علاوہ طور بیت المال کو بھی نوٹسوں کی اجرائی

دونوں اداروں کے علاوہ طور بیت المال کو بھی نوٹسوں کی اجرائی
حیدرآباد ۔ 16 مارچ (سیاست نیوز) مکرم جاہ ایجوکیشنل اینڈ لرننگ ٹرسٹ کی 55 ہزار مربع گز ارضی کے لئے سیٹ ون کی جانب سے صرف 30 ہزار روپئے کرایہ وصول ہورہا ہے۔ مکرم جاہ ٹرسٹ کی جانب سے سٹ ون کو موتی گلی کے علاوہ پرانی حویلی میں فراہم کردہ جائیدادیں جوکہ کرایہ پر دی گئی ہیں ان جائیدادوں کا جملہ رقبہ 55 ہزار مربع گز ہے اور دونوں اداروں کے درمیان قانونی رسہ کشی شروع ہوچکی ہے۔ سٹ ون کا قیام اقلیتی بیروزگار نوجوانوں کی تربیت کیلئے عمل میں لایا گیا تھا اور اس ادارے کی خدمات میں کسی قسم کی کوئی دشواری یا رکاوٹ پیدا نہ ہو اس کیلئے اس مسئلہ کو فوری طور پر حل کئے جانے کی ضرورت ہے۔ مکرم جاہ ایجوکیشنل اینڈ لرننگ ٹرسٹ کے قانونی امور کے نگران وکیل مسٹر ودیا ساگر نے بتایا کہ ٹرسٹ کی جانب سے نہ صرف سٹ ون بلکہ دیگر ادارہ جات کو بھی تخلیہ کی نوٹس روانہ کی گئی ہے اور سٹ ون کو دی گئی نوٹس میں اس بات کی صراحت بھی موجود ہیکہ ادارہ کی جانب سے 55 ہزار مربع گز اراضی پر مشتمل دونوں جائیدادوں کا کرایہ بے انتہاء معمولی ادا کیا جارہا ہے۔ دونوں جائیدادیں جوکہ شہر کے مرکزی مقامات پر ہیں ان کا کرایہ صرف30 ہزار ہونے کے باعث ٹرسٹ کے وسائل میں اضافہ کے امکانات موہوم ہوتے جارہے ہیں۔ مسٹر ایم ودیاساگر سینئر ایڈوکیٹ کے بموجب جن جائیدادوں کو تخلیہ کی نوٹس دی گئی ہے۔ ان میں سٹ ون کی دونوں جائیدادیں بھی شامل ہیں لیکن اگر سرکاری طور پر حکومت کی جانب سے مفاہمت کے ذریعہ کرایہ میں اضافہ کی پیشکش کی جاتی ہے تو ایسی صورت میں قانونی چارہ جوئی کے بجائے دونوں فریقین کے مابین تصفیہ کی گنجائش پیدا ہوسکتی ہے۔ انہوں نے واضح طور پر کہا کہ ٹرسٹ کی آمدنی اور خدمات کی انجام دہی کیلئے وسائل میں اضافہ کی غرض سے یہ اقدامات کئے جارہے ہیں۔ مسٹر ودیا ساگر نے کہا کہ حکومت کے اداروں میں صرف سٹ ون واحد ادارہ ہے جوکہ ٹرسٹ کی جائیداد پر کرایہ دار ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ موتی گلی میں واقع طور پر بیت المال کے دفتر سے بھی ٹرسٹ کو ماہانہ صرف 30 روپئے کرایہ حاصل ہورہا ہے اسی لئے 1000 مربع گز سے زائد اس جائیداد کو بھی خالی کروانے کیلئے ٹرسٹ کی جانب سے نوٹس روانہ کردی گئی ہے۔ طور بیت المال کی جائیداد جوکہ 1000 مربع گز سے زائد ہے اس سے صرف 30 روپیہ ماہانہ کرایہ حاصل ہونا باعث تکلیف ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ٹرسٹ کی بیشتر جائیدادوں کے کرائے بالکل کم ہونے کے باعث قانونی چارہ جوئی کے ذریعہ ٹرسٹ نے اپنی جائیدادیں واپس حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اسی فیصلہ کی بنیاد پر مکرم جاہ ایجوکیشنل اینڈ لرننگ ٹرسٹ کی جانب سے طور بیت المال کو بھی تخلیہ کی نوٹس جاری کردی گئی ہے لیکن طور بیت المال کے ذمہ داران کی جانب سے تاحال کوئی جواب موصول نہیں ہوا ہے۔ مسٹر ودیا ساگر کے بموجب طور بیت المال کے ذمہ داران کے جواب موصول ہونے کے بعد ہی مستقبل کی کارروائی کی جائے گی اور جواب موصول ہونے کی صورت میں عدالت سے رجوع ہوتے ہوئے احکامات حاصل کئے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ جلوخانہ کی کئی ملگیات میں کاروبار کررہے افراد کو بھی نوٹس جاری کردی گئی ہیں اسی لئے یہ نہیں کہا جاسکتا کہ ٹرسٹ کسی ایک ادارے یا شخص کے خلاف کارروائی میں مصروف ہے۔

TOPPOPULARRECENT