Friday , June 22 2018
Home / شہر کی خبریں / سڑک پر کچرا پھینکنے ، پانی بہانے والوں پر جرمانہ

سڑک پر کچرا پھینکنے ، پانی بہانے والوں پر جرمانہ

۔3 بچوں کے والدین کو بلدی انتخابات کیلئے نااہل قرار دینے قانون پر نظرثانی کا جائزہ
حیدرآباد۔ 11 جنوری (سیاست نیوز) پنچایت راج کی نئی قانون ساز میں سڑک پر کچرا پھینکنے والوں، گھر کے پینے کا پانی گلیوں میں بہانے سڑکوں پر قبضہ کرتے ہوئے غیرمجاز تعمیرات کرنے والوں کے خلاف جرمانہ عائد کرتے ہوئے غیرقانونی تعمیرات کے انہدام کی فیس وصول کرنے پر غور کیا گیا۔ تین بچوں کے والدین کو مقامی اداروں کے انتخاب کیلئے نااہل قرار دینے کے قانون پر نظر ثانی کرنے کے مطالبات کا بھی جائزہ لیا گیا۔ ریاستی وزیر پنچایت راج جے کرشنا راؤ نے آج مسلسل چوتھے دن پنچایت راج کے نئے قانون کے مسئلہ پر مختلف محکمہ جات کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اجلاس طلب کیا۔ کلکٹرس کی جانب سے سرپنچس کے خلاف کی جانے والی تادیبی کارروائی پر سرپنچس کو اپیل کرنے کیلئے کوئی ٹریبیونل نہیں ہے۔ اگر ٹریبیونل قائم کیا جائے تو اس کے اثرات کیسے ہوں گے، اس کا جائزہ لیا گیا۔ نئی قانون سازی کے مختلف پہلوؤں پر غور کیا گیا۔ سرپنچس کے خلاف کی گئی کارروائی کو چیلنج کرنے کیلئے کوئی اتھاریٹی نہیں ہے۔ محکمہ پنچایت راج ہی ان شکایتوں کا جائزہ لیتی ہے۔ اس معاملے میں شفافیت لانے ٹریبیونل تشکیل دینے کی تجویز تیار کی گئی۔ اس کے علاوہ قانون کی خلاف ورزی کرنے والے عوام کے خلاف بھی کارروائی کرنے انہیں قانون کا پاسدار بنانے پر بھی غور کیا گیا۔ سڑکوں پر کچرا ڈالنے، گھر کا پانی، گلیوں میں بہانے سڑکوں پر ناجائز قبضوں کے بشمول 22 نکات کا جائزہ لیا گیا۔ قانون و قواعد کی خلاف ورزی کرنے والوں کیخلاف جرمانہ عائد کرے۔ دیہی علاقوں میں صاف صفائی پر خصوصی توجہ دینے غیرمجاز تعمیرات کی انہدامی فیس وصول کرنے پر بھی غور کیا گیا۔ پنچایت راج اداروں میں آڈیٹنگ کی کارروائی سست انداز سے جاری ہے۔ اس میں تیزی پیدا کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ آڈیٹنگ کے مسئلہ پر سب کمیٹی متعلقہ ڈائریکٹر وینکٹیشور راؤ سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔ گرام پنچایتوں کے معاشی معاملت کو ان لائن سے مربوط کرنے کیلئے ہر گرام پنچایت میں ایک کمپیوٹر آپریٹر کا تقرر کرنے سے سب کمیٹی نے اتفاق کیا۔

TOPPOPULARRECENT