Thursday , June 21 2018
Home / شہر کی خبریں / سکریٹریٹ میں 1865 ملازمین مقامی ہونے کا ثبوت پیش

سکریٹریٹ میں 1865 ملازمین مقامی ہونے کا ثبوت پیش

سیما آندھرا سکریٹریٹ ملازمین کی تقسیم کا عمل تیز، اعتراضات پیش کرنے کا آج آخری دن

سیما آندھرا سکریٹریٹ ملازمین کی تقسیم کا عمل تیز، اعتراضات پیش کرنے کا آج آخری دن

حیدرآباد 20 مئی (سیاست نیوز) ریاست کی تقسیم کو مدنظر رکھتے ہوئے تلنگانہ ریاست اور آندھراپردیش ریاست سے تعلق رکھنے والے (سیما آندھرا علاقہ سے تعلق رکھنے والے) سکریٹریٹ ملازمین کی تقسیم کے عمل میں تیزی پیدا کرتے ہوئے ملازمین کی تقسیم کا آغاز کردیا گیا ہے۔ اسی تقسیم کے ایک حصہ کے طور پر آج سکریٹریٹ میں کام کرنے والے جملہ (1865) ملازمین کو مقامی ہونے کے پیش کردہ ثبوت کی روشنی میں تقسیم عمل میں لائی گئی جن میں 805 تلنگانہ ملازمین اور 1060 سیما آندھرا ملازمین شامل ہیں۔ یہ تقسیم اڈیشنل سکریٹری عہدے کی سطح تا ڈی آر اینڈ ٹی اسسٹنٹ پوسٹس کی جائیدادوں تک ہی فی الوقت تقسیم عمل میں لائی گئی ہے اور اس تقسیم کے تعلق سے کسی کو کوئی اعتراض رہنے پر اپنے اعتراض سے کل یعنی 21 مئی بروز چہارشنبہ 12 بجے دن تک ڈپٹی سکریٹری جی اے ڈی کو مطلع کرنے یا اعتراض کو درج کروانے کی مہلت دیتے ہوئے ضروری ہدایات دی گئیں۔ اس سلسلہ میں سرکاری ویب سائیٹ پر باقاعدہ طور پر ہدایات دی گئیں۔

لیکن اس مسئلہ پر دونوں ریاستوں یعنی تلنگانہ و آندھراپردیش ریاستوں سے تعلق رکھنے والے ملازمین کے مابین زبردست ٹکراؤ و تناؤ کی صورتحال پیدا ہوگئی ہے اور تلنگانہ سکریٹریٹ ایمپلائیز یونینوں کے قائدین نے اس بات کا ادعا کیا ہے کہ ملازمین کی تقسیم کا عمل مناسب انداز میں نہیں کیا گیا لہذا ان قائدین نے تقسیم کے عمل پر اپنی گہری تشویش کا اظہار بھی کیا ہے۔ اور الزام عائد کیاکہ سیما آندھرا سے تعلق رکھنے والے بعض ملازمین کو تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے ظاہر کیا گیا۔ جبکہ سکریٹریٹ تلنگانہ ملازمین یونین قائدین نے حکومت سے دریافت کیاکہ آخر صرف ایک دن کی مہلت دے کر جلد بازی میں ملازمین کی تقسیم عمل میں لانے کی ضرورت کیوں محسوس کی گئی ہے اور ایک طویل مدت سے عمل شروع کرنے اب اچانک جلد بازی کا مظاہرہ کرنے کی آخر کیا وجہ ہے۔ ان قائدین نے کہاکہ تمام محکمہ و شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے ملازمین کی مکمل تفصیلات ویب سائیٹ پر رکھے بغیر سیما آندھرا سے تعلق رکھنے والے عہدیدار تلنگانہ ملازمین کے ساتھ دھوکہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن ان کوششوں کو ہرگز برداشت نہ کرکے سکریٹریٹ تلنگانہ ملازمین یونین قائدین نے حکومت کو سخت انتباہ دیا اور کہاکہ اگر ملازمین بالخصوص سیما آندھرا ملازمین کی تقسیم بہتر انداز میں عمل میں نہ لائی جائے تو اس کے عواقب و نتائج کی ریاستی حکومت ہی راست ذمہ دار ہوگی۔ اسی دوران سکریٹریٹ تلنگانہ ملازمین یونین صدر مسٹر نریندر راؤ نے حکومت کی جانب سے اعلان کردہ 1865 ملازمین کے منجملہ 805 ملازمین کا تلنگانہ سے تعلق رہنے کا اظہار انتہائی مضحکہ خیز قرار دیا

اور کہاکہ 805 ملازمین کے منجملہ زائداز 400 ملزمین راست طور پر سیما آندھرا سے تعلق رکھتے ہیں اور ان تمام ملازمین کے حکومت کو ہی غلط تفصیلات پیش کرکے حکومت کے ساتھ مذاق کرنے کیساتھ ساتھ دھوکہ بھی کیا ہے اور غلط ثبوت پیش کئے۔ اُنھوں نے ریاستی حکومت سے مطالبہ کیاکہ وہ سکریٹریٹ تلنگانہ ملازمین یونین کی جانب سے پیش کی جانے والی رپورٹ کی بنیاد پر ہی ملازمین کے مقامی ہونے یا غیر مقامی ہونے کا فیصلہ کیا جائے اور کہاکہ تلنگانہ ریاستی سکریٹریٹ میں صرف اور صرف تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے ملازمین و عہدیدار ہی ہونا چاہئے اور ریاست کی تقسیم کے باوجود سیما آندھرا ملازمین کو تلنگانہ سکریٹریٹ میں برقرار رہنے کا موقع فراہم کیا جائے تو پھر ایک مرتبہ احتجاج شروع کرنے کا سکریٹریٹ تلنگانہ ملازمین یونین قائدین نے حکومت کو سخت انتباہ دیا۔

TOPPOPULARRECENT