Tuesday , January 16 2018
Home / ہندوستان / سیاحتی مرکز پر غیرہندوؤں پر امتناع عائد کرنے کا رکن پارلیمنٹ یوگی آدتیہ ناتھ کا مطالبہ

سیاحتی مرکز پر غیرہندوؤں پر امتناع عائد کرنے کا رکن پارلیمنٹ یوگی آدتیہ ناتھ کا مطالبہ

ہریدوار۔ 14 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایک اور تنازعہ پیدا کرتے ہوئے بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ یوگی آدتیہ ناتھ نے آج غیر ہندوؤں پر ہری کی پوری سیاحتی مرکز پر داخلہ پر امتناع عائد کردینے کا مطالبہ کیا۔ یہ ہریدوار نے دریائے گنگا کے کنارے ایک مشہور گھاٹ ہے وہ پنچایتی اکھاڑا اداسین کی جانب سے ان کے اعزاز میں منعقدہ تہنیتی تقریب سے خطاب کررہے تھ

ہریدوار۔ 14 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ایک اور تنازعہ پیدا کرتے ہوئے بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ یوگی آدتیہ ناتھ نے آج غیر ہندوؤں پر ہری کی پوری سیاحتی مرکز پر داخلہ پر امتناع عائد کردینے کا مطالبہ کیا۔ یہ ہریدوار نے دریائے گنگا کے کنارے ایک مشہور گھاٹ ہے وہ پنچایتی اکھاڑا اداسین کی جانب سے ان کے اعزاز میں منعقدہ تہنیتی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ غیرہندوؤں کو ہری کی پوری کا دورہ کرنے پر امتناع عائد کردیا جانا چاہئے۔ یہ دونوں نقاط نظر سے مناسب ہے۔ گھاٹ کی صیانت اور مذہبی نقطہ نظر سے غیر ہندوؤں کو یہاں کا دورہ کرنے کی اجازت نہیں دی جانی چاہئے۔ یہ اتراکھنڈ کا ایک انتہائی مقبول سیاحتی مرکز ہے۔ ہری کی پوری پر ملک کی سطح سے سال بھر سیاح آتے رہتے ہیں۔

خاص طور پر مبارک موقعوں پر دریائے گنگا میں ڈبکی لگانے یاتری یہاں آتے ہیں۔ آدتیہ ناتھ کے تبصرہ پر تنقید کرتے ہوئے صدر ریاستی کانگریس کشور اپادھیائے نے کہا کہ عوام کے داخلہ سے اتراکھنڈ میں فرقہ وارانہ امن کیلئے خطرہ ہے۔ ایسے افراد کے ہریدوار میں داخلہ پر پابندی عائد کی جانی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہم اس بات کی توثیق کریں گے کہ بی جے پی رکن پارلیمنٹ نے ایسا کہا تھا یا نہیں، اگر یہ درست ہے تو ان کے داخلہ پر پابندی عائد کرنے کے اقدامات کئے جانے چاہئیں۔ ہریدوار میں ایسے لوگوں کا داخلہ بند کردیا جانا چاہئے۔ گذشتہ سال آدتیہ ناتھ نے دھمکی دی تھی کہ مجوزہ گھر واپسی پروگرام کے تحت دوبارہ تبدیلی مذہب کا سلسلہ اترپردیش میں دوبارہ شروع کردیں گے۔ ان کے اس بیان پر سیاسی پارٹیوں نے ان کی برطرفی کا اور وزیراعظم نریندر مودی سے اس مسئلہ پر بیان دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ جاریہ ماہ کے اوائل میں گورکھپور کے بی جے پی رکن پارلیمنٹ نے ایک اپیل کرتے ہوئے عطیہ مہم شروع کی تھی تاکہ گائے کو راشٹر ماتا قرار دیا جائے۔ انہوں نے دعویٰ کیا تھا کہ ان کا مطالبہ ہر ہندوستانی کے جذبات کی نمائندگی کرتا ہے۔

TOPPOPULARRECENT