Wednesday , November 22 2017
Home / شہر کی خبریں / سید عمر جلیل کی میعاد میں توسیع

سید عمر جلیل کی میعاد میں توسیع

وقف بورڈ کی تشکیل تک عہدیدار مجاز کی حیثیت سے برقرار
حیدرآباد۔20 اکٹوبر (سیاست نیوز) حکومت نے وقف بورڈ کے عہدیدار مجاز کی حیثیت سے سید عمر جلیل کی میعاد میں توسیع کردی ہے۔ اس سلسلہ میں G.O. RT229 جاری کیا گیا۔ سکریٹری اقلیتی بہبود کی جانب سے جاری کردہ جی او میں ہائی کورٹ کے احکامات کا حوالہ دیا گیا جس میں وقف بورڈ کی تشکیل کے لئے حکومت کو تین ماہ کا وقت دیا گیا ہے۔ حیدرآباد ہائی کورٹ نے 12 ستمبر کو اپنے فیصلے میں وقف بورڈ کی تشکیل کے لئے حکومت کو تین ماہ کی مہلت دی تھی۔ سید عمر جلیل کی میعاد عہدیدار مجاز کی حیثیت سے 18 اکٹوبر کو ختم ہوگئی۔ اس مسئلہ پر قانونی رائے حاصل کرنے کے بعد حکومت نے عمر جلیل کی میعاد عہدیدار مجاز کی حیثیت سے 11 ڈسمبر تک توسیع دینے کا فیصلہ کیا ہے جوکہ وقف بورڈ کی تشکیل کے لئے ہائی کورٹ کی مقرر کردہ مہلت کا آخری دن ہے۔ جی او میں کہا گیا ہے کہ عہدیدار مجاز کی میعاد 11 ڈسمبر یا پھر وقف بورڈ کے انتخابات تک ہوگی۔ اس سلسلہ میں باقاعدہ اعلامیہ بھی جاری کردیا گیا۔ واضح رہے کہ وقف ایکٹ کے تحت کسی بھی عہدیدار مجاز کی میعاد ایک سال سے زائد نہیں ہوسکتی اور عمر جلیل چھ ماہ کی دو میعاد مکمل کرچکے ہیں۔ وقف بورڈ میں بحران کے امکانات کو دیکھتے ہوئے حکومت نے ہائی کورٹ کے احکامات کی پاسداری کرتے ہوئے چھ ماہ کے بجائے 11 ڈسمبر 2016ء تک میعاد میں توسیع کی ہے۔ دلچسپ بات تو یہ ہے کہ ایک طرف سید عمر جلیل نے یہ تاثر دینے کی کوشش کی کہ وہ دوبارہ وقف بورڈ کا کوئی عہدہ قبول نہیں کریں گے۔ تاہم بتایا جاتا ہے کہ مقامی سیاسی جماعت نے حکومت کو ان کی میعاد میں توسیع کے لئے مجبور کیا تاکہ وقف بورڈ کی تشکیل کی صورت میں وہ الیکشن اتھاریٹی کے طور پر برقرار رہ سکے۔ عمر جلیل کو پہلی مرتبہ 19 اکٹوبر 2015ء کو عہدیدار مجاز مقرر کیا گیا تھا اور 24 مئی 2016ء کو دوسری مرتبہ میعاد میں چھ ماہ کی توسیع دی گئی تھی۔ سید عمر جلیل تین اہم عہدوں پر فائز ہیں جن میں سکریٹری اقلیتی بہبود کے علاوہ ڈائرکٹر اقلیتی بہبود اور عہدیدار مجاز وقف بورڈ شامل ہیں۔

TOPPOPULARRECENT