Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / سیرت نبی ؐ کا ہر پہلو ہمارے لئے مشعل راہ

سیرت نبی ؐ کا ہر پہلو ہمارے لئے مشعل راہ

جامعہ ریاض الصالحات کا جلسہ سیرت النبیؐ میںسرکردہ خواتین کا خطاب
حیدرآباد ۔ /10 جنوری (راست)  مدارس اسلام کے مضبوط قلعے ہیں اور تبلیغ و اشاعت دین کے مرکز ہیں اورر سول اللہ کی سیرت سراجاً منیراً کی شکل میں ہمارے پاس موجود ہے ۔ جس سے زندگی کے ہر موڑ پر روشنی حاصل کی جاسکتی اور حب رسول کے تقاضے اسی وقت مکمل ہوسکتے ہیں جب ہم اللہ کے رسولؐ کی سنتوں سے اپنی زندگیوں کو منور کریں گے ۔ اگر آخرت کا یقین اور جوابدہی کا تصور ہم میں پیدا ہوجائے تو یقیناً سیرت کا ہر نمونہ ہمارے لئے مشکل راہ بن سکتا ہے ۔ ان خیالات کااظہار محترمہ خورشید فرزانہ بہ معاون ناظمہ شعبۂ خواتین جماعت اسلامی ہند جلسہ تلنگانہ و اڑیسہ نے اپنے صدارتی خطاب میں کیا ۔ وہ جامعہ ریاض الصالحات اعظم پورہ کے تحت سیرت النبیؐ جلسے سے مخاطب تھیں جو رشید فنکشن ہال میں /9 جنوری کو منعقد ہوا تھا ۔ جس میں جامعہ کی طالبات نے سیرت النبیؐ کے مختلف پہلوؤں کو اپنے پرجوش تقاریر میں نمایاں کیا جو اردو ، عربی ، انگریزی اور تلگو زبانوں میں پیش کی گیئں اور حمد ، نعت اور ولولہ انگیز ترانے پیش کئے ۔ نیز اس کے علاوہ ایک ڈرامہ بعنوان :  یہ مسلمان ہیں جنہیں دیکھ کے شرمائیں یہود ، جس میں جامعہ ہذا کے ہاسٹل کی طالبات نے سماج کی مختلف برائیوں اور میلاد کے نام پر کی جانے والی مختلف  بدعات کا احاطہ کرتے ہوئے نبی کریم کی تعلیمات کو پیش کیا ۔اس ڈرامہ کو محترمہ عرشیہ مہہ جبیں جامعہ ہذا کی معلمہ نے لکھا ۔ مہمان خصوصی ڈاکٹر ثمینہ تابش نے کہا کہ علم وہ بے بہا نعمت ہے جو ہر ایک کو حاصل نہیں ہوتی ۔ اس کی قدر کریں اور اس کی قدر اسی وقت ممکن ہوسکتی ہے جب ہم اس کے لئے سب کچھ قربان کردیں ۔ تب کہیں اس کا کچھ حصہ ہمارے نصیب میں آتا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ علم ہمارے عروج و زوال کی کنجی اور کامیابی کی کلید ہے جو اس کو تھام لے وہی سعادت دارین حاصل کرسکتا ہے ۔ مہمان مقررہ خدیجہ مہوین معاون ناظمہ شعبہ  خواتین جماعت اسلامی ہند نے اپنے خطاب میں طالبات کو نصیحت کی کہ وہ حصول علم کے بعد تحریکی زندگی سے جڑجائیں اور اپنی دعوتی ذمہ داریوں کو پورا کریں ۔ انہوں نے کہا کہ پہلے دل و دماغ میں صالح انقلاب پیدا ہونا چاہئیے ۔ پھر دنیا میں بہت جلد یہ انقلاب برپا ہوسکتا ہے ۔ انہوں نے ماؤں کو مشورہ دیا کہ وہ اپنی بیٹیوں کی تربیت پر خاص توجہ دیں اور گھر میں اسلامی ماحول فراہم کریں ۔ مہمان مقررہ محترمہ جلیسہ یسین ایڈوکیٹ جنرل سکریٹری مسلم ویمن انٹلکچول فورم نے اپنے خطاب میں نبی کریمؐ کی دعوتی زندگی کے مختلف ادوار پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ آپؐ کی د عوتی زندگی صرف مدافعتی نہیں تھی بلکہ ایک ایسی انقلابی دعوت تھی جس نے زندگی کے ہر پہلو کو متاثر کیا۔ صدر معلمہ جامعہ ہذا ڈاکٹر رفعت سیما نے جامعہ کی تعلیمی رپورٹ پیش کرتے ہوئے طالبات کے تعلیمی معیار کو بلند کرنے اور ان کی تربیت کے لئے کی جارہی کوششوں کا ذکر کیا ۔ انہوں نے طالبات کے سرپرستوں کو مشورہ دیا کہ وہ اپنے گھروں کے ماحول کو جامعہ کے مطابق بنائیں ۔ تعلیم کے ساتھ ساتھ طالبات کے اخلاق و کردار کی مکمل حفاظت ہوسکے ۔ نظامت جامعہ ہذا کے معلمات محترمہ میمونہ اور محترمہ روبینہ نے انجام دی ۔ محترمہ غوثیہ سلطانہ منتظمہ جامعہ ہذا کی دعا پر جلسہ اختتام کو پہنچا ۔

TOPPOPULARRECENT