Friday , January 19 2018
Home / شہر کی خبریں / سیما آندھرا کے مزید دو قائدین کانگریس سے مستعفی ، تلگو دیشم میں شامل

سیما آندھرا کے مزید دو قائدین کانگریس سے مستعفی ، تلگو دیشم میں شامل

حیدرآباد ۔ 2 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز ) : کانگریس پارٹی کے ساتھ نسل در نسل ایک طویل عرصہ سے وابستگی رکھنے والے خاندان سے تعلق رکھنے والے کانگریس قائدین نے ریاست کی تقسیم کرنے کانگریس پارٹی فیصلہ کے خلاف بطور احتجاج اپنا رشتہ ناطہ توڑتے ہوئے کانگریس پارٹی کو خیر باد کیا اور تلگو دیشم پارٹی میں شمولیت اختیار کرلینے کا اعلان کیا ۔ تلگو دیش

حیدرآباد ۔ 2 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز ) : کانگریس پارٹی کے ساتھ نسل در نسل ایک طویل عرصہ سے وابستگی رکھنے والے خاندان سے تعلق رکھنے والے کانگریس قائدین نے ریاست کی تقسیم کرنے کانگریس پارٹی فیصلہ کے خلاف بطور احتجاج اپنا رشتہ ناطہ توڑتے ہوئے کانگریس پارٹی کو خیر باد کیا اور تلگو دیشم پارٹی میں شمولیت اختیار کرلینے کا اعلان کیا ۔ تلگو دیشم پارٹی میں شامل ہونے والے کوئی اور قائدین نہیں بلکہ مسٹر منڈلی بدھا پرساد صدر نشین ریاستی سرکاری زبان کمیشن و سابق وزیر اور مسٹر پی وینکٹیشور راؤ ، سابق وزیر ہیں ۔

جن کا ضلع کرشنا سے تعلق ہے ۔ اس طرح سیما آندھرا علاقہ جات سے کانگریس کے تمام قائدین ایک کے بعد دیگرے کانگریس سے مستعفی ہو کر تلگو دیشم پارٹی میں شامل ہورہے ہیں ۔ مسٹر ایم بدھا پرساد اور ایم وینکٹیشور راو نے آج صدر تلگو دیشم پارٹی مسٹر این چندرا بابو نائیڈو سے ان کی قیام گاہ پر ملاقات کی اور اپنی تلگو دیشم پارٹی میں شمولیت اختیار کرنے کا اظہار کیا ۔ مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے اپنے مثبت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے ان دونوں قائدین کو تلگو دیشم پارٹی کا زرد کھنڈوا اوڑھا کر پارٹی میں ان کا خیر مقدم کیا اس کے علاوہ آج مسٹر بی ویریا صدر نشین گڈی واڑہ اربن بینک بھی کانگریس پارٹی سے مستعفی ہو کر تلگو دیشم پارٹی میں شامل ہوگئے ۔ اس موقعہ پر مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے اپنا اظہار خیال کرتے ہوئے جاریہ ماہ اور آئندہ ماہ ریاست میں منعقد ہونے والے عام انتخابات میں تلگو دیشم پارٹی کی 100 فیصد نہیں بلکہ ہزار فیصد کامیابی حاصل کرنے کا ادعا کیا اور

کہا کیوں کہ ریاست کے عوام دس سالہ کانگریس دور اقتدار سے عاجز آکر اس مرتبہ انتخابات میں تلگو دیشم پارٹی کو بھاری اکثریت سے منتخب کرنے کا فیصلہ کرچکے ہیں ۔ مسٹر چندرا بابو نائیڈو نے ریاست کے عوام کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ لوگ ووٹ سوچ سمجھ کر نہ ڈالیں گے تو آندھرا پردیش کے عوام کا مستقبل بالکلیہ طور پر تاریک ہو کر رہ جائے گا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر آئندہ پانچ سال کے دوران ہم سخت محنت کے ساتھ کام نہ کریں گے تو نئی نسل کا مستقبل کیا ہوگا ۔ عوام کو سوچ لینے کی شدید ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نسل در نسل ضلع کرشنا میں ان دونوں قائدین ( ایم بدھا پرساد اور پی وینکٹیشور راؤ کے ) کے خاندان کانگریس پارٹی سے اپنی اٹوٹ وابستگی رکھتے تھے ۔ لیکن محض کانگریس پارٹی کی جانب سے ریاستی تلگو عوام کو دئیے ہوئے دھوکہ و فریب کو برداشت نہ کرتے ہوئے کانگریس پارٹی کو خیر باد کر کے تلگو دیشم پارٹی میں شامل ہونے پر مجبور ہونا پڑا ۔

صدر تلگو دیشم پارٹی نے کہا کہ سیما آندھرا کو سنگاپور کے خطوط پر ترقی دینے کی ہمت و صلاحیت صرف اور صرف تلگو دیشم پارٹی کو ہی ہے ۔ انہوں نے پارٹی میں شامل ہونے والے تمام قائدین سے پارٹی استحکام کے لیے متحدہ طور پر کام کرنے کی پر زور خواہش کی ۔ مسٹر ایم بدھا پرساد اور ایم وینکٹیشور راو نے اس موقعہ پر اپنا اظہار خیال کرتے ہوئے کانگریس پارٹی صدر مسز سونیا گاندھی کو نہ صرف ہذف ملامت بنایا بلکہ اپنی شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی نے ریاست آندھرا پردیش کو تقسیم کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے بہت ہی غلط اقدام کیا ۔ ان قائدین نے پر زور الفاظ میں کہا کہ سیما آندھرا کو سنہرے آندھرا میں تبدیل کرنے کی قائدانہ صلاحیتیں صرف اور صرف صدر تلگو دیشم پارٹی مسٹر این چندرا بابو نائیڈو میں ہی پائی جاتی ہیں اسی لیے وہ تلگو دیشم پارٹی میں شامل ہوئے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT